Posted in Pakistan

پاک بھارت ٹاکرا اور سوشل میڈیا

  Posted On Wednesday, February 18, 2015   …..جویریہ صدیق……
ورلڈ کپ کرکٹ میں بھارت نےپاکستان کو چھٹی بار شکست دے دی ۔ شکست کے بعد پاکستانی عوام بہت بددل نظر آئے اور فیس بک اور ٹویٹر پر اپنی آراء کا برملا اظہار کرتے رہے۔دو دن یہ ٹرینڈ ٹوئٹر پر سب سے اوپر رہا اور سولہ لاکھ سے زائد ٹوٹیس اس میچ کے حوالے سے کیے گیے۔اس میچ کا انتظار عوام کو شدت سے تھا اور خاص تیاری کے ساتھ یہ میچ دیکھا گیا۔سڑکیں بازار خالی تھے اور تمام شایقین اتوار کا دن ہونے کے باوجود صبح اٹھ کر میچ دیکھنے میں مصروف رہے۔جشن کی تیاری بھی کر رکھی تھی لیکن قومی کرکٹ ٹیم نے شایقین کو مایوس کیا۔میچ ہارنے کے بعد کوئی اتوار کی نیند کی قربانی کا ذکر کرتا رہا تو کوئی پٹاخوں کے پیسے ضائع ہونے کا افسوس ۔کچھ شائقین کرکٹ تم جیتو یا ہارو ہمیں تم سے پیار ہے کا نعرہ لگاتے رہے تو کچھ پاکستان کرکٹ بورڈ کے خلاف ٹویٹس کرتے رہے۔
جماعت اسلامی کے رہنما منور حسن نے ٹویٹ کیا کہ ہار یا جیت کھیل کا حصہ ہے ہمیں دعا کرنی چاہیے اللہ تعالیٰ پاکستانی ٹیم کو آنے والے میچز میں فتح سے ہمکنار کرے۔تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان نے ٹویٹ کیا کہ میں نے آج میچ میں اچھا ٹیلنٹ دیکھا لیکن بہتر حکمت عملی کی ضرورت ہے۔عرفان ،وہاب، یاسر ،سہیل اچھا دفاع کرسکتے ہیں اگر انہیں بیٹسمین اچھے رنز بھی دے کر جائیں۔انہوں نے کہایونس خان دیگر میچز کےلیے لازم ہیں۔ شیخ رشید احمد سربراہ عوامی مسلم لیگ نے ٹویٹ کیا کہ وہی کہانی ایک بار پھر دہرائی گئی۔ ایم کیو ایم کے رہنما حیدر عباس رضوی نے ٹویٹ کیا کرکٹ ایک کھیل ہے اس کو لڑائی کی طرح نا لیا جائے۔ہم سب کو پاکستانی ٹیم سے پیار ہے کھیل کا فیصلہ جو بھی ہو ۔ تحریک انصاف کے رہنما ڈاکٹر عارف علوی نے ٹویٹ کیا کہ تین سو رنز بنانا ممکن تھا لیکن کھلاڑیوں نے پریشر میں آکر کھیلالیکن مجھے امید ہے کہ آگے آنے والے میچز میں ہم ضرور کامیاب ہو ں گے۔جماعت اسلامی کے رہنما ڈاکٹر معراج صدیقی نے ٹویٹ کیا کہ اس عقیدت سے آئوٹ ہوتے ہیں، ہار جانا ثواب ہو جیسے۔
صحافی فہد حسین نے ٹویٹ کیا کہ مصباح نے آخر تک لڑائی کی لیکن اپنی ٹیم ہی انہیں دھوکہ دے گئ. اینکر عاصمہ شیرازی نے ٹویٹ کیا کہ تھرڈ امپائر کا فیصلہ غیر منصفانہ تھا۔ایسا لگ رہاہے بھارت کو فیور دی جارہی ہے۔ صحافی ارشد شریف نے ٹویٹ کیا کہ شاہد آفریدی اب تک کھیلے جانے والے پانچ ورلڈ کپ میں ایک بھی ہاف سنچری مکمل نا کرسکے تو یہ بوم بوم کس بات کے ہیں ۔صحافی شفیع نقی جامی نے ٹویٹ کیا عمر اکمل کے ہاتھ میں کل بھی شاید چھید تھے آج بھی ہیں۔
جہاں ایک طرف میچ ہارنے کے بعد سنجیدہ تنقید ہو رہی تو دوسری طرف کچھ لوگ ہلکے پھلکے موڈ میں بھی ٹویٹ کر رہے تھے، اینکر غریدہ فاروقی نے ٹویٹ کیاکہ پاکستان اس لیے ہار گیا کیونکہ منگل کو گوشت کا ناغہ تھا۔نیوز اینکر رابعہ انعم نے ٹویٹ کیا آج تو پٹاخے اٹھانے کی بھی نوبت نہیں ۔نیوز اینکر منصور علی خان نے ٹویٹ کیا کہ کتنی بار کہا ہے کوئی اور کھیل پروموٹ کرلیا کرلو نہیں پر کرکٹ ہی دیکھنی ہے لوتسی ویکھ لو ہن کرکٹ۔فکشن رائٹر مبشر علی زیدی نے کہا کہ بس چار پانچ وکٹیں اور ہوتیں اور پندرہ بیس اوورز اور مل جاتے تو آج میچ پاکستان نے جیت جانا تھا۔صحافی حسن عبداللہ نے ٹویٹ کیا پاکستانیوں کوئی بات نہیں مختلف ٹی وی اشتہارات میں آپ پاکستانی کھلاڑیوں کو عمدہ بیٹنگ کرتے ہوئے دیکھ سکتے ہیں۔ کالم نویس عمار مسعود نے ٹویٹ کیا کہ اتنے دل 14 فروری کو نہیں ٹوٹے جتنے دل 15 فروری کو ٹوٹے ہیں۔بی این این کے رائٹرسمیع چوہدری نے طنزیہ کہا کہ پاکستانی بیٹنگ کے ساتھ ساتھ منصفانہ بیٹنگ اور اعلیٰ درجہ کی امپائرنگ نے بھی بھارت کی جیت میں اہم کردار ادا کیا۔ صحافی نذرانہ یوسفزئی نے ٹویٹ کیا کہ میڈیا نے کھیل کو جنگ بنا کر پیش کیا۔
مختلف طبقہ ہایے فکر سے تعلق رکھنے والے پاکستانی بھی بھارت سے میچ ہارنے کا دکھ مناتے رہے اور ٹویٹس کرتے رہے۔پراوڈ خاکی نے ٹویٹ کیا کہ تیسرے امپائر پر اب چوتھا امپایر بیٹھانا ناگزیر ہوگیا ہے تاکہ وہ تیسرے امپائر کے فیصلوں کا جانچ سکے۔انعم جے چیمہ نے ٹویٹ کیا مجھے اب اور سیلفیز کا انتظار ہے جو آسٹریلیا میں لی جائیں گی۔ احمد خان نے ٹویٹ کیا کہ ورلڈ کپ میں انڈیا کو ہرانے تک ادھار بند ہے دوکانداروں نے نئی تختی لگا دی۔زویا خان نے ٹویٹ کیا ان سب کے لیے ایک منٹ کی خاموشی جو اتوار کے روز میچ دیکھنے کی خاطر ساڑھے سات بجے اٹھے میں بھی ساڑھے چھ بجے اٹھ گئی تھی۔عاصم اکرام نے ٹویٹ کیا مصباح کے صبر کو سلام انہوں نے آخر تک جم کر گیم کو اٹھائے رکھا۔مجاہد احمد نے ٹویٹ کیا کہ موجودہ پاکستانی ٹیم ابھی تک اس دور میں رہ رہے ہیں جب ٹیمیں دو سو پندرہ سکور کرکے جیت جایا کرتی تھیں۔محمد فیاض نے ٹویٹ کیا جو ساری دعائیں پاکستانی کرکٹ ٹیم کے لیے مانگی تھیں ان کا ثواب دادا دادی کی روح پہنچے ،آمین۔فہد خان نے ٹویٹ کیا کہ کرکٹ ہے تو کھیل لیکن جب پاک بھارت ٹاکرا ہو تو یہ جذبات کی جنگ بن جاتی ہے۔کے عباسی نے ٹویٹ کیا ایک پٹاخوں سے بھرا ڈبہ برائے فروخت ہے۔محمد بلال نے ٹویٹ کیا ہار جیت کھیل کا حصہ ہے ابھی کونسا ورلڈ کپ ختم ہوگیا ہے کیا پتا سیمی فائنل یا فائنل میںپھر ٹاکرا ہوجائے۔ – See more at: http://blog.jang.com.pk/blog_details.asp?id=10669#sthash.wqbW4ErM.dpuf

Posted in ArmyPublicSchool

اسحاق امین شہید

Posted On Thursday, February 26, 2015   ….. جویریہ صدیق…..
آرمی پبلک اسکول کا ایک اور پھول مرجھا گیا۔میاں اسحاق امین اپنے بھائی میاں عامر امین کے ساتھ معمول کے مطابق آرمی پبلک سکول و کالج ورسک روڈ کےلیے روانہ ہوا۔16دسمبر کو دونوں ہی بھائیوں کا پرچہ تھا۔اسحاق سیکنڈ ائیر پری میڈیکل اور میاں عامر سیکنڈ ائیر پری انجینئرنگ کا طالب علم تھا۔دونوں اپنے ہم جماعتوں کے ساتھ پیپر دینے میں مشغول تھے کہ دہشت گردوں کا حملہ ہوگیا۔دونوں ہی بھائیوں کو شدید زخمی حالت میں سی ایم ایچ پہنچایا گیا۔اسحاق کو جبڑے اور بازو پر گولی لگی جبکہ عامرکو پیر اور کندھے پر گولیاں لگیں۔والدین پہلے تو اپنے بچوں کو ڈھونڈتے رہے لیکن اسکول میں انہیں نا پا کر اسپتال کا رخ کیا۔دونوں بچوں کا علاج چلتا رہا۔پاک آرمی کے چیف راحیل شریف کے احکامات پر سی ایم ایچ میں تمام بچوں کے علاج کو مفت کردیا گیا،لیکن کچھ بچوں کی تشویش ناک حالت پر نو تاریخ کو میڈیکل بورڈ بیٹھا اور یہ فیصلہ ہوا کہ30 بچوں کو کراچی آغا خان اسپتال بھجوایا جائے گا، ان بچوں میں اسحاق اور عامر بھی شامل تھے۔

وقت گزرتا گیا لیکن خیبر پختون خوا کی حکومت نے بچوں کے علاج معالجے کے لیے امدای چیک دینے میں تاخیر کی تو شہداء فورم نے خود ہی اپنی مدد آپ کے تحت بچوں کو کراچی بھجوانے کے انتظامات کر لیے اور26بچے کراچی چلے گئے۔لیکن ڈاکٹرز نے تین بچوں کو سفر سے روک دیا کیونکہ ان کی حالت تشویشناک تھی جن میں اسحاق،انصار اور ولید شامل تھے۔اسحاق کے جبڑے میں گولی تھی جس کے باعث اس کے دماغ میں ائیر ببل بن گیا اوروہ بینایی سے محروم ہونے کے بعد کوما میں چلا گیا۔والدین کو امید تھی کہ خیبر پختون خوا کی حکومت زخمی بچوں کے علاج میں دلچسپی دکھائے گی لیکن ایسا نا ہوا اور اسحاق21 فروری کو سی ایم ایچ میں دم توڑ گیا۔

اسحاق امین پری میڈیکل کا طالب علم تھا ۔چھٹی جماعت سے آرمی پبلک اسکول میں زیرتعلیم تھا ۔ہمیشہ سے اسکو یہی شوق تھا کہ وہ آرمی ڈاکٹر بنے گا۔اس لیے پری میڈیکل میں ایڈمیشن لیا، منزل اس کے سامنے تھی لیکن 16 دسمبر دہشت گردوں نے اس کے تمام خواب چکنا چور کردئیے اور وہ دو ماہ سے زائد موت سے جنگ لڑنے کے بعد زندگی کی بازی ہار گیا۔اسحاق کے والد میاں امین کہتے ہیں کہ ان کے چار بیٹے ہیں جن میں سے دو آرمی پبلک اسکول و کالج میں سیکنڈ ائیر کے طالب علم تھے ۔ پشاور سانحے میں ان کے دونوں بیٹے شدید زخمی ہوئے جس میں سے اسحاق چل بسا اور عامر کی حالت تشویشناک ہے۔ان کے مطابق اس مشکل کی گھڑی میں آرمی چیف اور پشاور کے کور کمانڈر نے ان کا ساتھ دیا لیکن وزیراعلیٰ خیبر پختون خواہ اور صوبائی حکومت کے رویے نے انہیں شدید مایوس کیا، انہوں کہا کہ میں وزیراعظم پاکستان میاں محمد نواز شریف سے بھی ناراض ہوں۔ میرا جوان بیٹا چلا گیا میرے گھر میں قیامت برپا ہے، میرا دل غم سے پھٹ رہا ہے لیکن میرے دلجوئی کے لیے کوئی نا آیا،تاہم مجھے اپنے بیٹے پر فخر ہے کہ اسے شہادت نصیب ہوئی اور اس نے اپنی جان پاکستان کے لیے قربان کی۔

اسحاق کے بھائیوں وقار اور اسفند یار کے مطابق اسحاق بہت زندہ دل تھا گھر میں وہ ہمیشہ امی کا ہاتھ بٹاتا تھا ۔اس کے ساتھ ساتھ محلہ داروں اور رشتہ داروں کی مدد میں پیش پیش رہتا۔ہم سب جب ٹی وی دیکھ رہے ہوتے تو وہ کچن میں امی کے ساتھ رات کے کھانے میں مدد کرتا کبھی سلاد بنا لیتا تو کبھی رائتہ۔اس کو ہمیشہ اس بات کا خیال رہتا کہ ہمارے کاموں کا زیادہ بوجھ ہماری والدہ پر نا پڑے۔اسحاق کا چلے جانا ان کے لے بہت بڑا سانحہ ہے۔دہشتگردی کے اس واقعے نے ان کا زندہ دل ہنستا مسکراتا بھائی ان سے چھین لیا۔اب ہمیں اپنے دوسرے بھائی عامر کی فکر لاحق ہے کہ اسکا علاج صیح طریقے سے ہوجائے کیونکہ اس کی حالت بھی غیر تسلی بخش ہے۔

اسحاق شہید کے والد میاں امین نے کہا کہ میرے جوان بیٹے نے اپنی جان اس وطن پر نثار کردی لیکن اس قربانی کو زندہ رکھنے کے لیے ہمیں متحد ہونا ہوگا ۔ہمیں کسی کے ڈر سے بھی اپنے بچوں کو اسکول بھیجنے سے روکنا نہیں چاہیے ۔پاکستان کے سب بچوں کو چاہیے کہ وہ سب دل لگا کر پڑھیں اپنے استاتذہ کا احترام کریں۔ہم دہشت گردی انتہا پسندی کو صرف تعلیم سے ہی شکست دے سکتے ہیں۔

شہدا وغازی فورم پشاور کے سیکریٹری ابرار احمد یوسف زئی کے مطابق اس وقت26 بچوں کو ہم علاج کے لے کراچی آغا خان بجھواچکے ہیں خیبر پختون خوا کی حکومت نے ہمیں بہت تاخیر کرکے امدادی چیک دئیے جس میں سے آدھے تاحال کیش نہیں ہوسکے ۔ہم نے اپنی آپ مدد کے تحت پیسے جمع کرکے بچوں کو کراچی بھجوایا اور ان کے علاج کے ابتدائی پیسے بھی خود فورم نے جمع کروائے۔ابرار احمد کے مطابق دو بچے ولید اور انصار اب بھی پشاور میں ہی ہیں کیونکہ ان کی حالت ایسی نہیں تھی کہ وہ ہوائی سفر کرسکتے۔ان کے مطابق وفاقی اور صوبائی حکومت بچوں کے علاج میں دلچسپی دکھائے تاکہ زخمی بچوں کی حالت مزید بگڑنے سے روکی جاسکے۔شہدا وغازی فورم کے صدر عابد بنگش نے کہا کہ کراچی میں بچوں کے لیے آغا خان میں بہترین انتظامات کیے گے ہیں اور وزیر صحت سندھ اور ایم کیو ایم کے رہنما فاروق ستار نے بھی ہر ممکن مدد کا یقین دلایا ہے۔

اسحاق امین تو اس دنیا سے شہادت کا درجہ پا کر رخصت ہوگیا لیکن اس کے لواحقین بہت کرب سے گزر رہے ہیں ایک جوان بیٹا دنیا سے چلا گیا دوسرااسپتال میں موجود ہے تو ان والدین پر کیا بیت رہی ہو کوئی بھی حساس طبیعت کا مالک شخص اس بات کا اندازہ لگا سکتا ہے۔ارباب اختیار کو یہ بات سوچنا ہوگی کہ اب بھی وہ صرف سیاست برائے سیاست کرتے رہیں گے یا سیاست برائے خدمت بھی کریں گے۔

وفاق اور صوبائی نمائندوں کو چاہیے کہ شہدا آرمی پبلک سکول کے لواحقین کی داد رسی کریں،جو بچے زخمی ہیں وہ بچے پاکستان کے بہادر غازی ہیں ان کی علاج معالجے کے لیے اگر انہیں حکومتی خرچ پر باہر بھی بھیجنا پڑے تو دریغ نا کریں۔اپنے سرکاری بابوئوں کو احکامات جاری کریں کہ فائلیں ادھر ادھر گھمانے سے پرہیز کریں اور زخمی بچوں کے علاج کے لیے فنڈز جاری کریں۔ایک ایک گزرتا لمحہ کہیں زخمی بچوں کو زندگی سے دور نا کردے۔دکھی ماں باپ کے غموں کا کچھ تو احساس ہو سیاست تو ہوتی رہے گی تھوڑی عوام کی خدمت بھی ہوجائے ۔وزیر اعظم نواز شریف کو خود چاہیے کہ اس معاملے میں وہ دلچسپی لیں، وہ اس ملک کے وزیر اعظم ہیں اگر بچوں کو امدادی چیک پہلے ہی مل جاتے تو شاید آج اسحاق امین ہم سب کے درمیان موجود ہوتا۔اس وقت آرمی پبلک اسکول کےشدید زخمی بچے صوبہ سندھ میں موجود ہیں ،گورنر عشرت العباد اور وزیر اعلیٰ سندھ قائم علی شاہ کو خصوصی دلچسپی لیتے ہوئے ان بچوں کے علاج پر فوری توجہ دینا چاہیے اور زخمی بچوں کے لیے فنڈز مختص کرنا چاہیے تاکہ یہ بچے زندگی کی طرف واپس لوٹ سکیں ۔
Javeria Siddique writes for Jang
Twitter @javerias   – See more at: http://blog.jang.com.pk/blog_details.asp?id=10693#sthash.eLSJxASM.dpuf

Posted in ArmyPublicSchool, Pakistan, ZarbeAzb, جویریہ صدیق

شہید رفیق رضا بنگش‎

13754116_1770452179899252_934988793871424411_n

 …..جویریہ صدیق……

یوں تو آرمی پبلک اسکول کے شہید اساتذہ اور بچوں کا چالیسواں ہوچکا ہے لیکن لواحقین کے لیے16 دسمبر کے بعد سے وقت تھم گیاہے۔وہ زندگی سے وابستہ امیدیں اور تمام رونقیں منوں مٹی تلے دبا چکے ہیں۔شہدا کے لواحقین ہیں اس لیے صبر و استقامت کی مثال تو ہیں لیکن ہیں تو انسان ہی نا جیتے جاگتے، اپنے پیاروں کو کھو دینے کا غم انہیں اندر ہی اندر کھائے جارہا ہے۔جانے والے چلے گئے لیکن لواحقین کو زندگی بھر کا روگ دے گئے۔جہاں پہلے پھول مسکرایا کرتے تھے اب وہاں خزاں کا موسم ہے۔
رفیق رضا بنگش بھی ان ہی ایک پھولوں میں ایک پھول ہے جو 16 دسمبر کو آرمی پبلک اسکول پر حملے کے دوران مرجھا گیا۔رفیق شہید بھی ہال میں دوسرے بچوں کے ساتھ موجود تھا ،جہاں ابتدائی طبی امداد کی تربیت دی جارہی تھی۔طالبان ظالمان موت کی صورت میں نازل ہوئے اور بچوں ان کے استاتذہ پر گولیاں برسانی شروع کردی۔رفیق بنگش کو بھی سر میں گولی لگی اور یوں صرف 15 سال کی عمر میں اس نے اپنے دیگر ساتھیوں کے ساتھ جام شہادت نوش کرلیا۔
زندگی سے بھرپور تابعدارمیٹرک کا طالب علم رفیق رضا بنگش ہمیشہ کلاس میں پوزیشن لیتا تھا۔پانچ سال سے آرمی پبلک سکول میں زیر تعلیم تھا ،والدین نے اس لیے آرمی پبلک سکول میں داخل کروایا کیونکہ یہ پشاور کے بہترین اسکولوں میں شمار میں ہوتا ہے۔رفیق کے ساتھ ہی اس کے چھوٹے بھائی مرتجب رضا بنگش کو بھی آرمی پبلک سکول میں داخل کروایا گیا اور یوں دونوں بھائی روزانہ ساتھ اسکول جاتے۔ رفیق پوزیشن ہولڈر ہونے کے ساتھ ساتھ اسکول میں نعت خوانی کرتا اور رمضان ،ربیع الاول میں میلاد النبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم میں ضرور حصہ لیتا۔
رفیق رضا بنگش سائنس کا طالب علم تھا لیکن وہ سائنس کو روزمرہ زندگی پر بھی اپلائی کرتا،گھر میں کوئی چیز بھی خراب ہوجاتی رفیق اپنا ٹول بکس اٹھاتا اور خود ہی گھر میں چیزیں ٹھیک کرنا شروع کردیتا اور اکثر کامیابی سے انہیں ٹھیک کردیتا۔رفیق کو بچپن سے ہی گاڑیوں کا بہت شوق تھا پہلے تو خوب سارے کھلونے جمع کرتا اور پھر خوب کار ریسنگ ہوتی۔عمر کے ساتھ ساتھ گاڑیوں میں اس قدر دلچسی بڑھی کہ ڈرایونگ ہی سکھ ڈالی۔اپنی ایک چھوٹی سے گاڑی ڈیزائن کی اور اسکول کے بعد بس ایک ہی مشغلہ اس چھوٹی گاڑی کو روز جدید چیزوں سے لیس کرتے رہنا۔رفیق کی یہ خواہش تھی کہ وہ اسکول کے سائنس پراجیکٹس کی نمائش میں اپنی یہ چھوٹی ڈیزائن کردہ گاڑی کو لے کر جائے گا لیکن ایسا نا ہوا اور وہ اپنی اس خواہش کے ساتھ دنیا سے رخصت ہوگیا۔
رفیق رضا بنگش کے والد عابد بنگش نے کبھی سوچا بھی نہیں تھا کہ ان کا لخت جگر ان کو یوں اچانک چھوڑ جائے گا۔ 16 دسمبر کو وہ اپنے دفتر میں کام میں مصروف تھے کہ میسج آیا آرمی پبلک سکول پر حملہ ہوگیا ہے ماتحت سے موٹر سائیکل لی کیونکہ وہاں گاڑی لے کر جانا ناممکن تھا ، راستہ جام ہوچکا تھا وہاں پہنچے ۔موٹر سائیکل جانے تک کی جگہ نہیں تھی اور وہ پیدل ہی اپنے بچوں کو ڈھونڈتے رہے مرتجب رضا بنگش تو اللہ کے کرم سے محفوظ رہا لیکن رفیق رضا بنگش کا کچھ پتہ نہیں چل رہا تھا۔عابد بنگش نے مختلف اسپتالوں میں چکر لگائے اپنے بیٹے کو ڈھونڈتے رہے ۔بیٹے کی سلامتی کے لیے دعائیں کرتے رہے لیکن ان کی تلاش سی ایم ایچ میں اس وقت ختم ہوئی جب ان کے شہید بیٹے رفیق رضا بنگش کا جسد خاکی ان کے سامنے موجود تھا ۔سفید کفن میں لپٹا معصوم ننھا شہید وطن کی خاطر اپنی جان قربان کر چکا تھا۔
رفیق بنگش کے ساتھ اس کے دوستوں مبین شاہ اور محمد یاسین نے بھی شہادت پائی۔یہ سب ساتھ پلے بڑھے اور ایک ساتھ ہی سفر آخرت پر روانہ ہوگئے۔رفیق رضا بنگش شہید کی والدہ بہت بے چین ہیں ان پر غموں کا پہاڑ جو ٹوٹ پڑا اتنا نازوں سے پالا بیٹا طالبان کی بربریت کی بھینٹ چڑھ گیا۔وہ ہر وقت ہر پل اس بات کی منتظر رہتی ہیں کہ کب کون سا لمحہ آئے اور وہ رفیق کو چاہےا یک پل کیوں نا ہو دوبارہ دیکھ سکیں ،بس کسی طرح ان کا لخت جگر واپس آجائے لیکن ایسا ممکن نہیں۔رفیق تو شہادت کا درجہ پا کر جنت میں چلا گیا۔ماں کا دل بے قرار ہے ہر پل ہروقت ہر آہٹ پر وہ صرف اپنے بیٹے کو پکار رہا ہے۔رفیق کی کاپیاں کتابیں کھلونے کپڑے سب ہی تو موجود ہیں وہ گاڑی بھی جس کو اس نے سائنسی نمائش میں لے کر جانا تھا بس اگر کوئی موجود نہیں ہے تو وہ رفیق خود ہے۔جو اپنے تمام پیاروں کو چھوڑکر چلا گیا۔
رفیق بنگش کے والد عابد بنگش کہتے ہیں کہ اس واقعے نے ان سب کی زندگی کو یکسر تبدیل کرکے رکھ دیا ہے۔ رفیق جیسے انمول کو کھونے کا کرب بیان سے باہر ہے لیکن وطن پر جان نچھاور کرکے اس نے ہم سب کا سر فخر سے بلند کردیا ہے۔انہوں نے کہا کہ کئی بار ان کی ہمشیرہ انہیں کینیڈا امیگریشن کے لیے کہہ چکی ہیں لیکن رفیق جب تک زندہ رہا اس نے ہر بار کہا کہ ہماراو طن پاکستان ہے اور ہمیں کسی غیر ملک میں جاکر کبھی نہیں رہیں گے۔ہمارا جینا بھی یہاں ہےاور مرنا بھی یہاں ہے یہ بات وہ سچ کرگیا اور اس مادر وطن پر اپنی جان نثار کردی۔شہید رفیق رضا بنگش کے بھائی مرتجب رضا بنگش کے مطابق میرا بھائی ہم سب کو بہت پیارا تھا لیکن میرے خیال میں اللہ تعالی کو وہ ہم سب سے زیادہ پیارا تھا اس لیے اس کو شہادت کے رتبے پر فائز کرکےاللہ نے اپنے پاس بلوالیا۔ مرتجب کا کہنا ہے میں نے اپنے آنسو روک لیے ہیں کیونکہ میرے بھائی کو میرے آنسو سے تکلیف نا ہو ۔میں نے اسکول جانا دوبارہ شروع کردیا ہے کیونکہ ہم پاکستانی بچے کسی دہشتگرد سے نہیں ڈرتے لیکن بھائی کی کمی کا احساس مجھے شدت سے ہے پہلے ہم دونوں ساتھ جاتے تھے اور اب میں اکیلا اسکول جاتا ہوں۔
رفیق رضا بنگش شہید کے خاندان کے مطابق ہم اپنے بیٹے کی قربانی پر نازاں ہے لیکن یہ وقت قوم کے متحد ہونے کا ہے ہم سب کو اپنے مفادات کو پس پشت رکھتے ہوئے اب صرف اس مادر وطن کے لیے متحد ہونا ہوگا۔ سول سوسائٹی کو مل کر فوج کا ساتھ دینا ہوگا تب ہی ہم سن مل کر ہی اس دہشت گردی کو ختم کرسکتے ہیں۔بچوں کی قربانی کو ہم رائیگاں نہیں جانے دےسکتے ،صرف متحد ہو کر ہی ہم دہشت گردی کے اس ناسور کو معاشرے سے اکھاڑ کر پھینک سکتے ہیں ۔
تمام پاکستانی جہاں شہید بچوں کے لیے رنجیدہ ہیں وہاں انہیں ان ننھے شہیدوں پر فخر بھی ہے کہ آرمی پبلک سکول میں بچوں اور استاتذہ نےموت کا جرات سے سامنا کیا اور وطن کے لیے جان قربان کردی،شہید رفیق رضا بنگش کو سلام، آرمی پبلک اسکول کے تمام شہدا کی عظمت اور جرات کوسلام۔

 

Posted On Thursday, January 22, 2015

Posted in Pakistan

سانحات اور قیادت کی بے حسی‎

  Posted On Monday, February 16, 2015   ……جویریہ صدیق……
پاکستان میں حکومت اور قانون نافذ کرنے والے ادارے عوام کے تحفظ میں بالکل ناکام نظر آرہے ہیں ۔ سال کی شروعات میں پندرہ دن کے وقفے سے دو امام بارگاہوں کونشانہ بنایا گیا۔شکار پور شہر میں مسجد میں73 نمازی دہشت گردی کا شکار ہوئے اور پشاور میں21 افراد نماز کے دوران دہشت گردوں کی بربریت کا نشانہ بنے۔
دھماکے میں جاں بحق ہونے والے صرف عدد نہیں ہوتے جیتےجاگتے انسان ہوتے ہیں ۔ا ن سے وابستہ کئی لوگوں کی زندگی کا محور صرف وہ ہی ہوتے ہیں۔کتنے ہی جان سے جانے والے گھر کا واحد کفیل ہوتے ہیں۔دھماکے خودکش حملے میں جب لوگوں اچانک اس دنیا سے چلے جاتے ہیں تو اس غم کا اندازہ صرف وہ ہی لگا سکتے ہیں جس کا پیارا اس دنیا سے جاتا ہے۔ہر روز پاکستان میں یہ موت کا کھیل جاری ہے، کبھی دھماکا کبھی ٹارگٹ کلنگ،کبھی خود کش حملہ ہر روز پاکستانیوں کا خون بہتا ہے۔خاص طور پر دہشت گردی کے خلاف لڑی جانے والی جنگ میں صوبہ خیبر پختون خواہ کی قربانیاں بہت زیادہ اس صوبے میں ہر چوک سڑک کسی نا کسی شہید یا سانحے سے منسوب ہے اس صوبہ کا ہر گوشہ اس صوبے پر ہونے والے مظالم کی داستان سناتا ہے۔16 دسمبر کو آرمی پبلک سکول میں 145 افراد نے جام شہادت نوش کیا جن میں 135 بچے تھے۔اس کے بعد توقع یہ ہی تھی کہ اب شاید عوام کے لیے کچھ سیکورٹی کا خاطر خواہ بندوبست کیا جائے گا لیکن شکار پور کا سانحہ اور پشاور میں امامیہ امام بارگاہ میں حملہ حکومتی دعووں کا پول کھولنے کے لیے کافی ہے۔
عوام اپنے اپنے علاقوں سے سیاسی اراکین کو اس لیے منتخب کرتے ہیں کہ وہ ان کی خدمت کریں لیکن یہاں سیاستدان صرف سیاست پر ہی یقین رکھتے ہیں عوام کی خدمت تو ان کے ایجنڈے میں ہی شامل نہیں۔اس وقت پھی سینیٹ الیکشن تمام سیاستدانوں کی پہلی ترجیح ہے، باقی دیگر ملکی مسائل کی کوئی وقعت ہی نہیں۔کس کو ٹکٹ دینا ہے کون زیادہ موزوں ہوگا کس کس کو سینٹ میں نواز کر ان کے احسانات کا بدلہ چکانا اس وقت زیادہ ضروری ہے۔باقی رہے عوام تو جب بھی کوئی دھماکہ ہوتا ہے تو بڑے لیڈران تو یہ کہہ کر خود کو علیحدہ کر لیتے ہیں کہ ہم تو جائے وقوعہ کا دورہ کرنا چاہتے تھے لیکن سیکورٹی کلیرنس نہیں ملی ۔سیاستدان ٹویٹ اور ٹی وی پر آکر عوام سے ہمدردی کرلیتے ہیں اور اس موقع پر بھی مخالف پارٹی کو نیچا دیکھانے سے باز نہیں آتے۔جو کوئی مقامی قیادت لواحقین سے ہمدردی کے لیے پہنچ بھی جائے تو اپنی پارٹی کے جھنڈے اور پوسٹر لیجانا نہیں بھولتے۔آخر کو جان ہیتھلی پر رکھ کر عوام کے درمیان آئے تو اس موقع کو کیش ناکروائیں وہ ؟ لواحقین کے ساتھ تصاویر لے کر سوشل میڈیا پر اپ لوڈ کروانے کے بعد نو دو گیارہ۔
کیا کبھی کس نے یہ سوچا ہے کہ دہشت گردی میں مرنے والا کتنا زندہ دل تھا ؟ اس کے دل میں کتنے خواب تھے ؟ اس کو زندگی سے کتنا پیار تھا ؟ وہ زندگی میں کیا کرنا چاہتا تھا اور اس کے قبر میں اتر جانے کے بعد پیچھے کتنی زندہ لاشیں اس کے گھر میں رہ گئی ہیں۔ایسا بہت ہی کم لوگ سوچتے ہیں یہاں دھماکا ہوا نہیں اور سیاسی جماعتیں میدان میں اتر جاتی ہیں ایک دوسرے پر گندگی اچھالنے کے لیے ہر مسئلے پر سیاست حالانکہ جس وقت کوئی بھی سانحہ ہوتا ہے تو عوام کو ہمدردی کی ضرورت ہوتی ہے پر افسوس ہمارے ہاں فوری طور پر اس پر سیاست شروع ہوجاتی ہے مرکزی حکومت صوبائی حکومت پر الزام دیتی ہے اور صوبائی مرکزی پر، اور یوں ایسا لگتا ہے سانحہ کا سبب عوام خود ہی ہیں جنہوں نے بے حس حکمرانوں کو خود پر مسلط کیا۔
شکار پور جیسےچھوٹے شہر میں نمازیوں پر حملہ ہوتا ہے ایک نسل کو ہی مٹا دیا جاتا ہے لیکن ملک کے بڑے بڑے لیڈران کو وقت ہی نہیں ملتا کہ وہ اس شہر کے باسیوں کے زخموں پر مرہم رکھ سکیں۔کسی نے سوچا ہے کہ73 افراد کے لواحقین کے ان کے بنا کیسے گزر بسر کریں گے؟ ان کی مائوں، بہنوں اور بچوں کی کفالت کون کرنے گا ؟نہیں کوئی اس طرف دیکھنے کو بھی تیار نہیں۔اسی طرح 13فروری کو جمعے کی نماز میں پشاور میں اہل تشیع نشانہ بنتے ہیں تو یہ بات عیاں ہوجاتی ہے کہ اب بھی خیبر پختونخوا دہشت گردوں کے نرغے میں ہے ان کا جہاں دل کرتا ہے کاروائی کرتے ہیں اور کئی پاکستانیوں کی زندگی کے چراغ گل کرجاتے ہیں۔
اکثر ان سانحات کے بعد وزیر داخلہ گھنٹوں پر محیط تقریر کرنے آجاتے ہیں جس میں وہ بتاتے ہیں کہ ہمیں تو پہلے ہی اطلاع تھی اگر جناب پہلے ہی اطلاع تھی تو آپ نے دہشت گردی کو روک کیوں نہیں پاتے ؟ پھر کہتے ہیں ہمیں خود کش حملہ آور کا سر مل گیا کبھی انگلی وغیرہ وغیرہ، وہ تو جیسے بایو میٹرک شاختی کارڈ یا سم لیے گھوم رہے ہیں نا جو آپ اس کی انگلی سے اسکا پورا حدود اربع نکال لیں گے۔اب بہت ہوگیا حکومت اور اپوزیشن اپنی اپنی ذاتی جنگ لڑنا بند کرے۔عوام کی خدمت کا آغاز کریں اگر اپنے ہی ووٹرز کے گلی محلوں میں نہیں آسکتے ان کی داد رسی نہیں کرسکتے تو بہتر یہ ہی کہ آپ اپنے عہدے سے مستعفی ہوجائیں۔صلاح الدین ایوبی نے کہا تھا حکمران جب اپنی جان کی حفاظت کو ترجیح دینے لگیں تو وہ ملک اور قوم کی آبرو کی حفاظت کے قابل نہیں رہتا۔
ملک میں فرقہ وارنہ دہشت گردی ایک بار پھر سر اٹھا رہی اور جمہوری حکومت اس کو روکنے میں مکمل ناکام نظر آرہی ہے۔امامیہ مسجد اور شکارپور میں جان سے جانے والے بھی اتنے ہی مسلمان اور پاکستانی ہیں جتنے آپ ہم سب ہیں۔پاکستانیوں کو اب فرقوں اور نسل کے رنگ و فرق سے نکلنا ہوگا۔جن تک ہم متحد نہیں ہوں گے ہم دہشت گردی کا مقابلہ نہیں کرسکتے۔حکومت کا یہ فرض بنتا ہے کہ پولیس کو جدید طرز پر تربیت دے اور ماڈرن ٹیکنالوجی سے لیس کرے تاکہ وہ عوام کا صحیح معنوں میں دفاع کرسکیں۔پاکستان کے اندر دہشت گرد تنظیموں کے خلاف مکمل کریک ڈائون کیا جائے،مدارس کی اسکروٹنی کی جائے ،دہشت گردوں سے ہمدردی کو ناقابل معافی جرم بنایاجائے۔اب ہمیں اپنا دوغلا رویہ ختم کرنا ہوگا ۔ اچھے طالبان اور برے طالبان کی رٹ گردانا بند کرنا ہوگی۔ سارے ہی دہشت گرد برے ہیں اور ہمیں قوم کو اس عذاب سے نجات دلانا ہوگا،انتہا پسندی کا خاتمہ کرنا ہوگا۔کب تک ہم دوسروں کے مفادات کی جنگ اپنے ملک میں لڑیں گے ہم سب کو اب صرف پاکستان کا مفاد سامنے رکھ کر سوچنا ہوگا۔
اب تک 70ہزار سے زائد پاکستانی دہشت گردی کے خلاف جنگ میں جانیں گنواچکے ہیں، جن میں 135 بچوں کے جنازے ایک ہی دن میں اٹھائے گئے۔اب ہم سب کو اپنی ذمہ داری سمجھنا ہوگی۔فوج سرحدوں پر ہمارا دفاع کررہی ہے دہشت گردوں کے خلاف بھی بر سرپیکار ہے ، اب پولیس کو جدید زمانے کے لحاظ سے تربیت دینا ناگزیر ہوگیا ہے، پولیس 25،30سالہ پرانے اسلحے سے جدید ہتھیاروں سے لیس دہشت گردوں کا مقابلہ نہیں کرسکتی ۔اس کے ساتھ ساتھ گلی محلوں میں امن کمیٹیاں بنائی جائیں جومشکوک افراد پر نظر رکھیں، یہ کمیٹی پولیس کے ساتھ مسلسل رابطے میں رہے۔پولیس بھی ان کے ساتھ بھرپور تعاون کرے۔عوام کو ایک بار پھر سے این سی سی کی ٹریننگ شروع کروائی جائے جس میں انہیں ہنگامی حالت کا مقابلہ کرنا سکھایا جائے، اس کے ساتھ ابتدائی طبی امداد بھی سکھائی جائے کہ کسی حادثے یا سانحے کی صورت میں کس طرح اپنے دیگر ہم وطنوں کی مدد کرنی ہے۔اگر اب بھی سجدے میں شہید ہونے والے افراد اور کمسنی میں مرجھانے والے پھولوں کی قربانی ہمارے مردہ ضمیر کو زندہ کرنے کے لیے نا کافی ہے تو ہمیں دہشت گردی کے عذاب سے کبھی نجات نہیں مل سکے گی۔
Javeria Siddique writes for Jang
Twitter @javerias   – See more at: http://blog.jang.com.pk/blog_details.asp?id=10665#sthash.M2F0pLOK.dpuf

Posted in Pakistan

پی ٹی آئی کی نرالی سیاست

پی ٹی آئی کی نرالی سیاست !!

  Posted On Monday, January 26, 2015   …..جویریہ صدیق…..
پی ٹی آئی کے انقلاب کے نعرے سے سب سے زیادہ پاکستان کی نی نسل متاثر ہوئی۔ 2013ء کے الیکشن میں پاکستان تحریک انصاف نے انقلاب اور تبدیلی کا نعرہ لگایا اور عوام نے قومی اسمبلی میں انہیں تیسری بڑی جماعت بنا ڈالا۔صوبہ خیبر پختون خواہ میں حکومت بھی مل گی ۔پاکستان میں جب بھی عوام اپنے حلقے سے صوبائی یا قومی اسمبلی کا نمائندہ چنتے ہیں تو ان کو امید ہوتی ہے کہ قانون سازی کے ساتھ ساتھ ان کا منتخب کردہ نمائندہ علاقہ مکینوں کے ہر دکھ درد میں شریک ہوگا۔ان کے مسائل سنے گا ،اس کے گھر دفتر کے دروازے ہر وقت شہریوں کے لیے کھلے ہوں گے۔
امید یہ ہی تھی کہ منتخب ارکان اپنے قائد عمران خان کی قیادت میں عوام کی خدمت میں مشغول ہوجائیں گے لیکن ایسا نہ ہوا،اس جماعت نے جو دھاندلی اور چار حلقوں کا شور ڈالا اس کی گونج اب تک فضائوں میں ہے۔ چلیں ایک پل کو مان لیتے ہیں کہ دھاندلی ہوئی تو کیا ان نشستوں پر بھی ہوئی جن پرپی ٹی آئی جیت کر آئی اگر نہیں تو کم ازکم انہیں ان ،شفاف ترین سیٹوں ، پر تو کام کرنا چاہیے تھا۔پرایسا نا ہوا ۔۔14 اگست 2014ء سے جو دھرنا شروع ہوا اس میں عوام کو ایک بار پھر نی امید دی گی کہ ہم انقلاب لائیں گے ،سب کچھ تبدیل ہوجائے گا، دھرنے سے کبھی یہ صدا لگتی کے کل انقلاب آرہا تو پرسوں کبھی یوٹیلٹی بل جلا دیے جاتے تو کبھی سول نافرمانی کی مہم شروع ہوجاتی یوں پی ٹی آئی کی ساری قیادت عملی طور پر اسلام آباد میں مصروف رہی اور ان کے حلقے پیچھے یتیم ہوگئے۔پھر تحریک انصاف نے سوائے خیبر پختون خواہ کے تمام اسمبلیوں سے استعفیٰ دے دیا ۔ان استعفوں سے عوام کی وہ امید بھی چلی گی جو انہوں نے نئے چہروں کو منتخب کرکے فرسود نظام کو شکست دینے کے لیے دیکھ رکھی تھی۔
سندھ اسمبلی میں تحریک انصاف کی 4 نشستیں تھیں، لیکن مستعفی ہوکر ان لوگوں کو مایوس کیا جنہوں نے تبدیلی کو ووٹ دیا اور اب ان چاروں ارکان کے استعفے جنوری2015ء میں منظور ہوگئے، جس کے بعد سے تحریک انصاف کی نمائندگی سندھ اسمبلی سے ختم ہوگئی۔ثمر علی خان،حفیظ الرحمان،خرم شاہ زمان اور ڈاکٹر سیما چاروں ہی کراچی سے منتخب ہوئے تھے، یوں کراچی کے جن عوام نے تبدیلی کو ووٹ دیا تھا پی ٹی آئی کی بچگانہ پالیسیوںنے انہیں مایوس کیا۔ ان خالی ہونے والی نشستوں پر ایم کیو ایم اور پی پی نے ضمنی انتخابات کے لیے تیاریاں بھی شروع کردی ہے۔اب کیا پی ٹی آئی بھی ضمنی انتخابات میں حصہ لے گی ؟ اگر فرض کرلیں کہ پارٹی حصہ لیتی ہے یا کسی آزاد امیدوار کی حمایت کرتی ہے تو اب بھی انتخابات کا نظام الیکشن کمیشن تو وہ ہی ہے اب کیسے انہیں یقین ہوگا کہ دھاندلی نہیں ہوگی کیا اس جماعت نے جوکہ تبدیلی کا نعرہ لگاتی ہے شفاف الیکشن اور مضبوط الیکشن کمیشن کے لیے کوئی قانون سازی کی ؟ نہیں انہوں نے تو منتخب ہونے کے بعد سے زیادہ تر وقت سڑکوں پر تبدیلی کو تلاش کرتے ہوئے گزرا ہے۔تبدیلی سڑکوں پر دھرنوں یا نعروں سے نہیں بلکہ کام کرنے سے آتی ہے۔اب جب خالی کی جانے والی نشستوں پر دوبارہ انتخابات ہوں گے اور پی ٹی آئی دوبارہ حصہ لینے کا فیصلہ کرلیتی ہے تو کیا ان حلقوں کے عوام دوبارہ انہیں ووٹ دینے آئیں گے۔جنہوں نے پہلی بار انہیں ووٹ دیا اوریہ ہی ایم این ایز پارٹی کے فیصلے پر اپنی نشستوں سے استعفیٰ دے گئے اور ووٹر پیچھے اکیلے رہ گئے۔
اب اگر پنجاب اسمبلی اور قومی اسمبلی سے بھی پی ٹی آئی کے استعفے منظور ہوگئے تو یہ قومی پارٹی سمٹ کر صرف ایک صوبے کی حد تک رہ جائے گی۔قومی اسمبلی میں اس وقت پی ٹی آئی کی 33 نشستیں ہیں اور پنجاب اسمبلی میں 30 نشستیں ہیں، اگر یہ تمام افراد بھی گھر واپس چلے گئے تو عوام کو جواب دہ کون ہے؟ اب تحریک انصاف کے چیرمین عمران خان نے کہا کہ ان کی پہلی ترجیح اب خیبر پختون خواہ ہوگا اور ان کی پارٹی سینیٹ الیکشن میں بھی حصہ لے گی۔ اب سوال یہ پیدا ہوتا ہے پارلیمان کے دو حصے ہیں ایک ایوان بالا ایک ایوان زیریں یعنی سینٹ اور قومی اسمبلی جب آپ کی جماعت قومی اسمبلی میں نہیں بیٹھنا چاہیتی تو وہ پھر سینیٹ میں ایسی کیا کشش ہے جو آپ کی پارٹی کو کھینچے چلی جارہی ہے۔
سینٹ کے52 ارکان گیارہ مارچ کو ریٹائر ہورہے ہیں اور خیبر پختون خواہ سمیت چاروں صوبوں سے گیارہ گیارہ ارکان منتخب ہوں گے اس کے ساتھ ساتھ دو اسلام آباد سے دو ،فاٹا کے چار اور دو اقلیتی ارکان شامل ہوں گے۔ عمران خان کی جماعت صوبہ سندھ صوبہ پنجاب اور قومی اسمبلی سے تو مستعفی ہیں اس لیے ان کی توجہ اب صرف خیبر پختون خواہ پر ہے۔خیبر پختون خواہ میں پندرہ سے سولہ ارکان کے ووٹ سے ایک نشت ملے گی اور تحریک انصاف آرام سے پانچ نشستیں لے جائے گی ۔
لیکن پی ٹی آئی کے ارکان پنجاب اسمبلی اور قومی اسمبلی کا کیا قصور ہے ؟ ان سیاستدانوں کا کیا قصور جن کے دل میں عوام کی خدمت کا جذبہ ہے اور وہ کام کرنا چاہتے ہیں لیکن ان کو اسمبلی سے باہر کیا ہوا ہے۔سب سے بڑھ کر ان لوگوں کا کیا قصور ہے جنہوں نے آپ کی پارٹی کو ووٹ دیا ۔عمران خان خود تو خیبر پختون خواہ پر توجہ مرکوز کردیں گے۔ وہاں سے منتخب پی ٹی آئی کے56 ایم این اے اتحادیوں کے ساتھ 2018ء تک مصروف عمل ہوجائیں گے۔پیچھے رہ جائیں گے وہ عوام جنہوں نے ملک بھر سے نمائندے منتخب کرکے قومی اسمبلی میں بھیجے اور جنہوں نے پنجاب سندھ سے تبدیلی کو ووٹ دیا تھا۔
تحریک انصاف کی کور کمیٹی کے اجلاس میں کچھ ارکان نے دبے دبے الفاظ میں کہا کہ اگر سینیٹ میں جانا ہے تو پھر اسمبلی میں بھی واپس جایا جائے۔ارکان نے یہ کہا کہ وہ اپنے اپنے حلقوں میں عوام کے سامنے جواب دہ ہیں۔ لیکن عمران خان کے پاس ویٹو پاور ہے اور انہوں نے یہ ہی بات مناسب سمجھی کہ اسمبلی میں نہیں جانا لیکن سینٹ ضرور جانا ہے۔اب دیکھنا یہ ہے کہ پارٹی میں کب تک اتحاد قائم رہے گا اور کب تک سب پارٹی ارکان اپنے چیرمین کی بات کا پاس رکھیں گے ۔جہاں تک بات ہے سینیٹ الیکشن کی اس حوالے سے بھی باوثوق ذرائع کا کہنا ہے کہ جن افراد سے پہلے وعدے کیے گئے تھے، اب انہیں بھی ٹکٹ ملتا مشکل نظر آرہا ہے اس حوالے سے بھی پارٹی میں تناو اور کھینچا تانی کی کفیت محسوس کی جارہی ہے۔
پی ٹی آئی کو ہوش مندی سے کام لیتے ہوئے اب دھرنے، احتجاج ، طعنوں اور الزامات کی سیاست سے نکل کر عوام کی خدمت کرنی ہوگی مہنگائی ، لوڈشیڈنگ اور دہشت گردی کے ستائے ہوئے عوام کے لیے فیس بک یا ٹویٹر کے اسٹیٹس یا ٹرینڈ سیٹ کرنے سے کچھ حاصل نہیں ہوگا عوام کے آگے آپ جب سرخرو ہوں گے جب آپ عملی طور پر عوام کی خدمت کریں گے ۔جن افراد نے ووٹ دیے ہیں بہت دن تک وہ صرف نعروں پر اکتفا نہیں کریں گے انہیں اپنے اپنے حلقوں میں ترقیاتی کام بھی چاہئیں۔سینٹ کو قومی اسمبلی اور صوبائی اسمبلی پر فوقیت دینا عوام کے ووٹوں کی توہین کرنا اور63 سیاستدانوں کو واپس گھر بٹھا دینا کہیں تحریک انصاف کی سیاسی خود کشی نا ثابت ہو ۔
Javeria Siddique writes for Jang
Twitter @javerias     – See more at: http://blog.jang.com.pk/blog_details.asp?id=10624#sthash.x626fiOI.dpuf

Posted in ArmyPublicSchool, Pakistan

پشاور کے بچوں کے لہو پر سیاست

  Posted On Thursday, January 15, 2015   …..جویریہ صدیق…….
کسی بھی انسان کا سب سے قیمتی اثاثہ اس کے بچے ہوتے ہیں۔ماں اپنی کوکھ میں نو ماہ رکھ کر بچے کو پیدا کرتی ہے تو ورثا بچے کی آمد پر پھولے نہیں سماتے ۔ بچے کے ناز نخرے اس کی کلکاریاں اس کی شرارتیں بس خاندان بھر کی توجہ کا مرکز بن جاتی ہیں۔اگر بچہ کو ہلکی سی بھی چوٹ لگ جایے یا معمولی سی بیماری آجایے تو ماں کے دل پر جو قیامت بیتی ہے اس کا حال صرف ماں ہی بیان کرسکتی ہے۔باپ بھی اتنی ہی شفقت بچے کو دیتا ہے جتنی ماں بچے کو محبت دیتی ہے۔دونوں کی کوشش ہوتی ہے بچے کو ایک ہلکی سی خراش بھی نا پہنچے۔
آرمی پبلک سکول میں شہید ہونے والے بچے بھی اپنے والدین کی آنکھوں کا تارہ تھے ان کے دل کا قرار اور زندگی کا کل اثاثہ ۔موت طالبان کی صورت میں آئی اور بچوں کے ساتھ وہ حیوانیت برتی گی کہ ظلم و بربریت کی ایسی مثال پہلے ملتی ہی نہیں۔مائوں نے اپنے جیتےجاگتے شہزادے سکول بھیجے تھے جب واپس ملے تو کسی کے چہرے پر گولیاں تھیں کسی کا گلا کاٹ دیا گیا تھا کسی پھول کا جسم گولیوں سے چھلنی ملا تو کسی تو جلا دیا گیا تھا۔پشاور کی مائیں روتی رہیں چیختی رہیں لیکن ان کے ہنستے کھیلتے بچے تابوتوں میں بے جان پڑے تھے۔مائیں ان کا نام لیتی رہی ان کو اٹھنے کا کہتی رہیں لیکن جنت کے پھول تو واپس جنت جا چکے تھے۔
اس سانحے کے بعد امید تھی کی سیاسی قیادت ایک ہوجائے لیکن ایسا نا ہوا کچھ دن سوگ کا لبادہ اوڑھے رکھنے کی بیکار کوشش کے بعد وہ ہی آپس کے الزامات،طعنے،لڑائی کی سیاست کا آغاز کردیاگیا۔اس دوران لواحقین کو یکسر فراموش کردیا۔پہلے ایک دو دن تو فوٹو شوٹ کے لیے مرکزی اور صوبائی حکومتی ارکان کے وزٹ ہوتے رہے اس کے بعد وہ ہی دھاندلی دھاندلی کا واویلا شروع ہوگیا۔پھر انقلابی لیڈر کی شادی آگئی۔لواحقین اگر یاد رہے تو صرف آرمی کو لواحقین کے مطابق ٰصرف آرمی کے نمائندے ہماری دلجوئی کرنے آئے۔انہیں گلہ ہے اس بات کا جب سیاسی جماعتوں کو ووٹ دیے وہ کیوں نا آئے۔
12 تاریخ سے آرمی پبلک سکو ل اور ملک کے تمام سکولوں میں تدریس کا سلسلہ دوبارہ شروع ہوگیا ۔تمام پاکستان کو اس وقت خوش گوار حیرت ہوئی جب بچوں کو پاکستان کے آرمی چیف راحیل شریف نے خود جا کر ریسو کیا۔اپنی اہلیہ کے ساتھ بچوں کی اسمبلی میں شرکت کی۔ سب بچوں سے ملے ان کا حوصلہ بڑھایا۔لواحقین منتظر رہے کہ وزیر اعظم نواز شریف کب آئیں گے، تحریک انصاف کے چیرمین عمران خان کب آئیں گے، پی پی کے شریک چیرمین آصف علی زرداری کب آئیں گے لیکن کوئی نا آیا۔جب میڈیا پر بہت شور مچ گیا۔تو عمران خان جن کی پارٹی کی خیبر پختون خواہ میں حکومت ہے یہ کہا کہ ہمیں منع کیا گیا تھا کہ پہلے دن آرمی کا فنکشن ہے آپ مت آئیں۔مسلم لیگ ن نے تو وضاحت دینا بھی ضروری نا سمجھا یہ ہی حال پی پی پی کا ہے۔
14 جنوری کو تحریک انصاف کے چیرمین عمران خان اکیس گاڑیوں کے قافلے کے ساتھ آرمی پبلک سکول پہنچے۔ان کی آمد پر سیکورٹی پر مامور پولیس نے شہدائے سانحہ پشاور کے لواحقین سے بدتمیزی کی ، انہیں دھکے دئیے اور برا بھلا کہا۔شہدائے پشاور کے نیم زندہ والدین اس بات پر احتجاج کرنے لگے اور گو عمران گو کے نعرے لگائے۔اسفند یار شہید کی والدہ دہائی دیتی رہیں کہ یہ سیاستدان کیسے ہمارے ساتھ ہیں ؟ ہم تڑپ رہے ہیں یہ شادی کررہے تھے یہ صرف باتیں کرتے ہیں ہمارے لیے تبدیلی کی لیکن اصل میں ان کے یہاں آنے کامقصد صرف فوٹو شوٹ تھا۔احسان شہید کی والدہ بھی روتی رہیں اور کہتی رہیں عمران خان ، نواز شریف، آصف علی زرداری ہمارے دو دو بیٹے چلے گئے اور آپ سب کو احساس ہی نہیں۔
آرمی پبلک سکول کے شہید بچوں کی مائیں دہائیاں دیتی رہیں، روتی رہیں اور پشاور پولیس پروٹوکول کے نام پر ان کو دھکے دیتی رہی، خیبر پختون خواہ حکومت کے نمائندے انہیں برا بھلا کہتے رہے۔مائیں یہ پوچھتی رہیں کہ ہمارے بچوں کا چالیسواں بھی نہیں ہوا اور یہ سیاستدان خوشی کے شادیانے بجاتے رہے۔16 دسمبر کے بعد سے ہمیں تنہا چھوڑا ہوا ہے ۔اب ہمارے بچوں کی لاشوں پر سیاست کر رہے ہیں اپنی سیاسی دکان چمکانے کے لیے آئے ہیں اور کچھ نہیں ان کا مقصد۔
عمران خان کے خلاف احتجاج پر صوبائی وزیر خیبر پختون خواہ مشتاق غنی نے یہ الزام عائد کردیا کہ احتجاج کرنے والے پلانٹڈ تھے اور تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان نے کہا کہ سمجھ نہیں آرہا کہ والدین نے احتجاج کیوں کیا ؟ اسکول آرمی کا ہے،صوبہ کے چیف پرویز خٹک ہیں تو میری آمد پر احتجاج کیوں ؟انہوں نے مزید کہا کہ کچھ لوگ مجھے بھی والدین نہیں لگے اس کے بعد انہوں نے پھر چار حلقے اور دھاندلی کی گردان شروع کردی۔
عابد رضا بنگش جن کے اپنے بیٹے رفیق بنگش نے آرمی بپلک سکول میں شہادت پائی اس بات پر افسوس کا اظہار کیا کہ خیبر پختون خواہ کی حکومت نے انہیں یکسر فراموش کردیا ہے اور اب اوپر سے یہ بھی الزام عائد کیا جارہا ہے کہ احتجاج کرنے والے والدین نقلی تھے،ان کے مطابق اگر یہ بات ثابت ہوگی تو وہ شہدا فورم کو ختم کردیں گے۔
آج جو بھی ہوا بہت افسوس ناک ہے شہید ہونے والے پھولوں کی لاشوں پر سیاست کی کوشش،بچوں کے لواحقین کو نقلی کہنا ان کو پولیس کے ہاتھوں سے ذلیل کروانا ہمارے سیاست دان کہاں جا رہے ہیں ۔نیم مردہ والدین جن کی زندگی تو قبر میں دفن ہوگی، ان والدین پر تشدد کرنے کا کیا جوازہے جن کے بچے چلے گئے ،کیا وہ خیبر پختون خوانئےپاکستان میں احتجاج بھی نہیں کرسکتےِ ؟کیا ہمارے سیاستدانوں اور انتظامیہ میں سے انسانیت ختم ہوگی ہے ؟ آج کے واقعے کے بعد آرمی پبلک سکول کے شہید بچوں کے والدین نے مطالبہ کیا کہ ان پر تشدد کرنے والے ایس ایس پی آپریشن اور ڈپٹی کمشنر کو فوری طور پر معطل کیا جائے اور صوبائی حکومت میں ذمہ دار افراد مستعفی ہوں۔
سیاست دانوں کے لیے یہ لمحہ فکریہ کہ سیاست برائے سیاست سے کہیں وہ عوام میں اپنی مقبولیت کھو نا دیں۔ کھوکھلے وعدے اور نعرے انقلاب بہت عرصہ تک عوام کو دلاسا نہیں دے سکتے۔اگر عوام کے لیے کچھ کرنا ہی ہےتو تمام سیاست دان سیاست برائے خدمت کریں۔عوام کے مفاد میں سیاست کی جائے اپنی ذاتی چپقلش اور عناد کو ایک طرف رکھ تمام سیاستدانوں کو دہشت گردی کے ستائے عوام کی داد رسی کے لیے فوری اقدام کرنا ہوں گے،ورنہ پاکستان کی آئندہ نسلوں کے سامنے یہ سر اٹھا کر نہیں چل سکیں گے۔
Javeria Siddique writes for Daily Jang
Contact at https://twitter.com/#!/javerias
– See more at: http://blog.jang.com.pk/blog_details.asp?id=10579#sthash.POoZxwGG.dpuf

Posted in ArmyPublicSchool

شہیدصائمہ طارق جرات وعظمت کی مثال

10891447_500767603397936_768906388404956407_n

…جویریہ صدیق..….

گھر سے باہر جو پہلا رشتہ کسی بھی بچے کا ماں باپ کے بعد قائم ہوتا ہے وہ ہے استاد اور شاگرد کا رشتہ۔استاد کو روحانی ماں باپ کا درجہ حاصل ہے۔بچہ ماں کی گود سے نکل کر جب درسگاہ آتا ہے تو اس کی شخصیت کو بنانے میں اساتذہ کرام کا سب سے بڑا ہاتھ ہوتا ہے۔بچہ جب تین سال کی عمر میں اسکول پہنچتا ہے تو روتا ہے مچلتا ہے کہ ماں باپ کے بنا اسے کہیں بھی نہیں رہنا وہ بار بار روتا ہے اور گھر جانے کی ضد کرتا ہے لیکن استاد اس بچے کا ننھا منا ہاتھ پکڑ اسے درسگاہ میں لا تا ہے وہ ایک شفقت بھرا لمس بچے کو غیر مانوس جگہ سے انسیت پیدا ہونے میں مدد دیتا ہے۔ استاد ہرجگہ بچے کا مددگار ہوتا انہیں لکھنا سکھاتا ہے، پڑھنا دین کی سمجھ دنیوی تعلیم اور معاشرے میں جینے کا طریقہ اور آگے چل کر یہ ہی استاد بچوں کو ترقی کرتا دیکھ کر فخر کرتے ہیں۔
آرمی پبلک اسکول میں بھی گیارہ سو سے زائد بچے ایسے ہی استاتذہ کے زیر چھائوں تعلیم حاصل کرنے میں مگن تھے۔جب والدین صبح اپنے بچوں کو اسکول چھوڑ کرجاتے تو یہ استاتذہ مسکراتے ہوئے بچوں کا استقبال کرتے۔ کتنے ہی چھوٹے چھوٹے بچے جب صبح ماں کے پہلو کے ساتھ چپک کر روتے تو یہ ہی استاتذہ اپنے ہاتھوں سے ان کے آنسو پونچھ کر گلے لگاتے اور تسلی دیتے کہ وہ سکول میں اکیلے نہیں ان کے لیے پیار شفقت تعلیم سب ہی کچھ موجود ہے۔نوجوانی کی دہلیز پر قدم رکھنے والے بچے تو اب استاتذہ کے دوستوں میں شمار ہوتے ۔ان کی تعلیم سے لے کر ان کے غیر نصابی مشاغل میں استاتذہ ان کے ہم قدم ان کی رہنمائی کرنے لیے موجود۔
اس ہی اسکول میں ایک ہر دل استاد صائمہ طارق بھی تھیں۔جنہوں نے اساتذہ کی تاریخ میں رحم دلی پیار محبت ایثار کی نی داستان رقم کر ڈالی۔آٹھویں کلاس کی ٹیچر جن کے ذمہ تمام سکیشنز کی انگریزی کی کلاس تھی۔صائمہ طارق شہید مردان سے تعلق رکھتی تھیں اور بی اے کرنے کے بعد ہی تدریس کا عمل شروع کردیا۔تدریس کے ساتھ تعلیمی سلسلہ بھی جاری رکھا پہلے انگریزی ادب میں ایم اے کیا اور بعد میں ایجوکیشن میں ایم فل۔انیس سو اٹھانوے سے تدریس کا آغاز کیا اور مردان کے عزیز بھٹی شہید اسکول میں پندرہ سال تعلیم کی روشنی بانٹتی رہیں۔پاک فوج کے بریگیڈیر طارق سعید کے ساتھ رشتہ ازدواج میں منسلک ہوئیں اور شادی کے بعد بھی تدریسی عمل ترک نا کیا۔اپنے شوہر کی ٹرانسفر کی وجہ سے پشاور میں سکونت اختیار کی اور چھبیس اکتوبر کو آرمی پبلک سکول ورسک روڈ جوائن کیا۔
جلد ہی صائمہ طارق کا شمار آرمی پبلک سکول ورسک روڈ میں زیرتعلیم بچوں کی ہر دلعزیز ٹیچر میں ہونے لگا آٹھویں جماعت کی کلاس ٹیچر ہونے کے ساتھ دیگر سکشینز کو انگریزی پڑھانے کا ذمہ بھی انہیں ملا۔صائمہ طارق نے ایم فل کے بعد پی ایچ ڈی کرنے کا ارادہ کیا تو بریگیڈیر طارق سعید نے انہیں کچھ عرصہ تدریسی عمل سے بریک لینے کا مشورہ دیا لیکن انہوں نے مسکراتے ہوئے کہا کہ میں گھر اسکول اور تعلیم کا سلسلہ آرام سے ہینڈل کر لو ںگی آپ فکر نا کریں ۔سولہ دسمبر کی صبح صائمہ طارق تہجد کی نماز پڑھنے کے بعد طالب علموں کی کاپیاں چیک کرنے لگیں ،کچن کے ضروری کاموں کو انجام دینے کے بعد اسکول کے لیے روانہ ہوگئیں ۔اہل خانہ کے مطابق گھر میں ملازمین ہونے کے باوجود وہ گھر کے سب کام خود کرنا پسند کرتی تھیں۔تہجدکے ساتھ ساتھ پانچ وقت کی نماز باقاعدگی سے پڑھا کرتی تھیں۔
اسکول میں تدریسی عمل کا آغاز ہوا اور صائمہ طارق کی کلاس نے ہال میں آرمی میڈیکل کور سے ابتدائی طبی امداد کی ٹرینگ لینا تھا۔صائمہ طارق تمام بچوں کو لے کر ہال میں گئیں اور نویں کلاس کے طالب عملوں نے بھی انہیں جوائن کرلیا۔تمام بچے اپنے استاتذہ کے ساتھ ہمہ تن گوش تھے اور ابتدائی طبی امداد سیکھنے لگے۔کسی زی روح کے گمان میں بھی یہ نا تھا کہ موت کے کالے سائے ان کی طرف بڑھ رہے ہیں۔اسکول میں فرسٹ ائیر سکینڈ ائیر کا پرچہ بھی تھا۔تدریسی عمل معمول کے مطابق جاری تھا کہ عینی شاہدین کے مطابق اچانک اسکول سے فائرنگ کی آوازیں آنے لگیں۔معصوم بچے سہم گئے اور استاتذہ نے ہال کے دروازے بند کردیے تاکہ بچے محفوظ رہ سکیں۔
لیکن ایسا نا ہوسکا طالبان نے ہال کے دو داخلی دروازے توڑ دیے اور موت بن کر بچوں پر گولیاں برسانا شروع کردیں۔ہال میں موجود ٹیچرز نے ہمت نا ہاری اور دہشت گردوں کے آگے سیسہ پلائی دیوار بن گئیں۔انہوں نے بچوں کو ہال سے بھاگنے کے لیے کہا تاکہ بچے اپنی جان بچاسکیں لیکن ظالم دہشت گردوں نے ہال میں موجود صائمہ طارق پر کیمیکل پھینک کر انہیں زندہ جلا دیا اور سحر افشاں ،سیدہ فرحت کو گولیاں مار کے شہید کیا گیا ،ان خواتین استاتذہ کے آخری الفاظ یہ ہی تھے کہ بچوں جائو اپنی جان بچائو متعدد بچے ہال سے نکلنے میں کامیاب بھی ہوگئے لیکن شہید صائمہ طارق،شہید سیدہ فرحت اور شہید سحر افشاں سمیت ایک سو پچاس افراد جن میں بیشتر بچے تھے اس دہشت گردی کے واقعے میں جام شہادت نوش کیا۔
آرمی کی کوئیک رسپانس ٹیم اور ایس ایس جی کمانڈو پندرہ منٹ کے اندر اندر سکول پہنچے اور دہشت گردوں کے خلاف آپریشن شروع کیا لیکن دہشت گرد کسی کو یرغمال بنانے نہیں آئے تھے ان کا مقصد صرف خون کی ہولی کھیلنا تھا۔آرمی پبلک اسکول کی پرنسل طاہرہ قاضی،استاتذہ اور 135 پھولوں نے اس سانحے میں شہادت پائی۔یوں ان سب نے بہادری اور جرات کی وہ داستان رقم کی ہے جو تا قیامت یاد رکھی جائے گی۔
صائمہ طارق شہید کو جب مردان میں دفن کیا گیا تو ان کے شاگرد دھاڑیں مار مار کر روتے رہے پندرہ سال مردان کے عزیز بھٹی شہید اسکول میں وہ ایک نسل کو تعلیم سےلیس کرگئی تھیں۔ ایک شاگرد کا تو یہاں تک کہنا تھا کہ میں اپنی پیدا کرنے والی ماں کو تو بھول سکتا ہوں لیکن اپنی روحانی ماں صائمہ طارق کو کبھی فراموش نہیں کرسکتامیں آج جو کچھ ہوں اپنی استاد شہید صائمہ کی وجہ سے ہوں۔آرمی پبلک اسکول ورسک روڈ کے طالب علموں کا کہنا تھا کہ صائمہ طارق کا شفیق چہرہ ہم کبھی بھول نہیں سکتے ہیں اللہ نے ہماری میم کو شہادت جیسے بڑے رتبے پر فائز کیا ہے اور ہماری حکومت سے درخواست ہے کہ ان سمیت ہمارے دیگر شہید ہونے والے استاتذہ کو بہادری کے تمغوں سے نوازا جائے۔
صائمہ طارق کے گھر والوں کا صبر کا قابل دید ہے ان کے شوہر بریگیڈیر طارق سعید ان کے بچے اور خاندان کے دیگر لوگ صائمہ طارق کی بہادری پر نازاں ہیں کس طرح اپنی جان کی پرواہ نا کرتے ہوئے روحانی ماں نے اپنے شاگردوں کو بچانے کی ہر ممکن کوشش کی۔اہل خانہ کے مطابق صائمہ بہت ہی ملنسار اور رحم دل شخصت کی مالک تھیں ان کی زندگی کا نصب العین صرف اور صرف بچوں میں علم کی روشنی بانٹنا تھا۔وہ صوم وصلوٰــۃ کی پابند تھیں اور بچوں کو بھی دنیاوی تعلیم کے ساتھ ساتھ دین اسلام پر عمل کرنے کی تلقین کرتی تھیں۔صائمہ شہید گھریلو کاموں میں بھی بہت دلچسپی لیتی تھیں اور خاص طور پر نت نئے کھانے بنانے کا شوق رکھتی تھیں۔اہل خانہ کے مطابق صائمہ شہید فوٹوگرافی کی بہت شوقین تھیں فون سے تصاویر لینے میں ماہر تھیں اس کے ساتھ ساتھ کیمرے سے بھی لمحات کو قید کرنے کی شوقین تھیں۔
صائمہ طارق کے اہل خانہ کے مطابق تصاویر کا ایک بہت بڑا ذخیرہ تو صائمہ کے ساتھ ہی چلا گیا جوکہ ان کے فون میں موجود تھا لیکن ان کے لکھے ہوئے مضامین اور افسانے گھر کے کمپیوٹر میں محفوظ تھے جوکہ اب ان کے لیے ایک قیمتی اثاثہ ہیں۔صائمہ طارق کے اہل خانہ کے مطابق ان کا پاکستان کے رہنے والوں کے لیے یہ ہی پیغام ہے ہمیں صائمہ طارق شہید اور دیگر شہدا کی قربانی کو رائیگاں نہیں جانے دینا ہم سب کو مل کر دہشت گردی کے خلاف جہدوجہد کرنا ہوگی اور اس سوچ کو شکست دینا ہوگی جو دہشت گردی کو اس ملک میں پروان چڑھا رہی ہے۔ہمیں فخر ہے کہ صائمہ طارق نے اپنے شاگردوں کو بچاتے ہوئے اس ملک اور اپنے روحانی بچوں کے لیے جان قربان کی۔

آتش و دہن میں کھڑی تھی تو
گلشن کے تحفظ میں کڑی تھی تو
درندے گھس آئے تھے وہاں
معصوم کلیوں کا تھا جو گلستاں
استاد بڑے شجیع ہوتے ہیں
سمندر جیسے وسیع ہوتے ہیں
شہید ہو کر امر ہوئی
وحشت پر ممتا لے گئی بازی

Javeria Siddique

Contact at https://twitter.com/#!/javerias

Posted On Monday, December 22, 2014

– See more at: http://blog.jang.com.pk/blog_details.asp?id=10466#sthash.C8ypURJ2.dpuf

Posted in ArmyPublicSchool, Pakistan

گل رعنا کا دکھ

گل رعنا کا دکھ

  Posted On Thursday, December 25, 2014   …..جویریہ صدیق……
مردان طورو سے تعلق رکھنے والی گل رعنا کے گھر محمد علی کی پیدایش12 اکتوبر1998 کو ہوئی۔گل رعنا اور ان کے شوہر شہاب الدین کی خوشی کی کوئی انتہا نہیں تھی۔تین بہنوں کا اکلوتا بھائی اسکا نام بھی بانی پاکستان قائد اعظم محمد علی جناح کے نام کی مناسبت سے محمد علی رکھا گیا۔محمد علی کو شروع سے ہی آرمی میں جانے کا شوق تھا اور وہ بچپن میں جب بھی مچل مچل کر گاڑی جہازفوجی ٹینک والے کھلونوں کی ضد کرتا تو شہاب الدین مسکراتے ہوئے جابجا کھلونے اس کو لے دیتے اکلوتا جو تھا ۔گل رعنا کی آنکھوں کی ٹھنڈک اس کے دل کا قرار جب گھر سے تعلیم کے حصول کے لیے نکلا تو اس کے لیے اس کو شوق کو مدنظر رکھتے ہوئے آرمی پبلک سکول ورسک روڈ کا انتخاب کیا گیا۔محمد علی کا تعلیمی سلسلہ شروع ہوا ہر مضمون میں بہترین اور ساتھ میں سکول کی باسکٹ بال ٹیم کا سب سے بہترین کھلاڑی۔سکول میں شوٹنگ میں بھی سب سے آگے اور ہمیشہ نشانے لیے ہوئے کہتا کہ ایک دن وہ دہشت گردوں پر بھی اسی ہی طرح نشانہ رکھ کر انہیں جہنم واصل کرےگا ۔گل رعنا کا شرارتی بیٹا ہر چیز میں آگے تھا گھر میں بہنوں کے ساتھ خوب شرراتیں ماما سے فرمائش، ماما چپس بنا دیں، ماما کیچپ دیں، ماما فرنچ ٹوسٹ کہاں ہے، ماما ریموٹ کہاں ہے میں نے سی آئی ڈی دیکھنا ہے بس جہاں کہیں ایکشن سسپنس سے بھرپور ڈرامہ یا پروگرام آرہا ہو وہاں ریموٹ صرف اس کاہی ہوتا۔محمد علی اپنے والد شہاب الدین کا خاص لاڈلا تھا گل رعنا پھر بھی سختی کرتی تھیں کہ اکلوتا ہے کہیں خود سر نا ہوجائے لیکن شہاب الدین تو کہتے کہ گل میرے بیٹے کو کچھ نا کہو کرنے دو اسکو شرارتیں یہ ہی دن ہیں ان کے کھیلنے کودنے کے پھر بڑا ہوجائے گا تو کہاں وقت ملےگا ۔
نوجوانی کی دہلیز پر دستک دیتا محمد علی کبھی دوستوں کے ساتھ کرکٹ کبھی باسکٹ بال تو کبھی کیرم کی بازی جہاں کہیں بھی محمد علی کھیل رہا ہوتا گل رعنا ایک نظر اس کو چپکے سے دیکھ ہی آتی جب محمد علی ان کو دیکھتا تو گھر آکر خفا ہوتا ماما اب میں بڑا ہوگیا میرے سب دوست دیکھتے ہیں کہ جہاں علی جاتا ہے اس کی ماما اس کو ضرور ایک نظر دیکھ کر جاتی ہیں لیکن گل رعنا مسکرا کر کہتی بیٹا یہ ماں کا دل ہے تم نہیں سمجھو گے۔دس دسمبر کو محمد علی باسکٹ بال میں میڈیل جیت کر آیا تو ماں نے بے ساختہ دعا دی بیٹا تم فخر خاندان ہو خدا تمہیں فخر پاکستان بنائے اور تم دیکھنا ایک دن اخبارات میں تمہاری تصاویر آئیں گی لیکن کسی کو کیا معلوم تھا محمد علی کی گل رعنا کے ساتھ ہی تصاویر آئیں گی لیکن سانحہ پشاور کے بعد۔
سولہ دسمبر کا دن طلوع ہوا محمد علی نے صبح کے وقت قرآن پاک ترجمے کے ساتھ پڑھا گل رعنا نے آواز دی بیٹا تیار ہوکر ناشتہ کرلو علی سکول کے لیے تیار تو ہوگیا لیکن ناشتہ نا کیا اور دوبارہ قرآن کی تلاوت شروع کردی ماں نے پھر آواز دی تو کہا امی میں چاہتا ہوں وین آنے سے پہلے سپارہ ختم کرلوں۔مامتا سے مجبور ماں نے کہا چائے ہی پی لو بس دو گھونٹ چائے پی اور سکول کے لیے روانہ ہوگیا ۔علی کےتمام دوست سکول کی باسکٹ بال ٹیم کا حصہ تھے۔باسکٹ بال کی پریکٹس کی بعد میں روٹین کی پڑھائی۔ اس دن ہال میں طبی امداد کی ٹرینگ دی جانی تھی اور میڈم افشاں کے ساتھ علی کی کلاس نائن ڈی بھی ہال میں آگئی ۔دوسری طرف گل رعنا اپنی بیٹیوں اور بیٹے کو سکول بھیجنے کے بعد گھر کے کاموں میں مصروف ہوگی ۔
موت طالبان ظالمان کی صورت آرمی پبلک سکول میں داخل ہوئی اور بچوں پر اندھا دھند فائرنگ شروع کردی گئی۔ طالبان کی طرف سےحیوانیت کا وہ کھیل کھیلا گیا کہ عرش کانپ اٹھا ۔میڈیم افشاں دہشت گردوں اور بچوں کے بیچ میں آگئی اور بچوں کو ہال سے بھاگنے کے لیے کہا۔محمد علی ان کچھ چند خوش نصیب بچوں میں تھا جوکہ ہال میں نکلنے سے کامیاب ہوگئے لیکن جب پیچھے دیکھا تو اس کے باسکٹ بال کے پلیئر ساتھی اس کے دوست اس کے کلاس فیلو اذان علی ،علی رحمان اور وقار تو پیچھے ہی رہ گئے تھے وہ پھر پلٹا تو ظالم دہشت گردوں نے گل رعنا کے پھول جیسے بیٹے کی ٹانگوں پر گولیاں ماردی۔وہ گر پڑا لیکن ہمت نا ہاری زمین پر رینگتا ہوا سکول کے گیٹ کی طرف بڑھا لیکن وحشی درندوں نے ایک بار پھر اس معصوم کو نشانہ بنایا اور گولیوں سے چھلنی کردیا یوں محمد علی اس وطن پر قربان ہوگیا۔
گل رعنا اور شہاب الدین کو جب اس واقعے کی اطلاع ہوئی تو فوری طور پر سکول کی طرف بھاگے لیکن وہاں آرمی آپریشن شروع ہوچکا تھا وہاں سے اسپتال کا رخ کیا تو گل رعنا کو یہ ہی امید تھی اس کا اکلوتا بیٹا اسکا نور نظر زندہ ہوگا ہسپتال میں قیامت صغری برپا تھی ہر طرف آرمی پبلک سکول کے ننھے پھولوں کی مسخ لاشیں تھیں۔اسپتال کے ایک کونے میں آرمی پبلک سکول کی پوری باسکٹ بال کی ٹیم کی لاشیں بھی موجود تھیں اسکول کی پوری باسکٹ بال ٹیم ہی ختم ہوگئی۔وہ بچے جو سنہرے خواب آنکھوں میں سجائے سکول گئے تھے اب ان کی بے نور آنکھیں سوال کر رہی تھیں کہ ہمارا کیا قصور تھا ہمیں کیوں اس نے دردی کے ساتھ قتل کیا گیا؟گل رعنا کا جیتا جاگتا بیٹا جس کو گھر سے سکول تعلیم کے لیے بھیجا تھا جس کو ابھی پاک فوج میں بھیج کر ملک کا پاسبان بننا تھا جس کے سہرے کے پھول ابھی دیکھنے تھے وہ بچہ دیگر ایک سو پینتیس بچوں کے ساتھ سفید کفن میں ملبوس تھا۔زمین کیوں نا پھٹی آسمان کیوں نا ٹوٹ پڑا آہ گل رعنا کی کل کاینات اس کا بیٹا محمد علی چلا گیا۔
محمد علی کے تابوت سے لپٹ کر روتی رہی اسکو اٹھنے کا کہتی رہی گھنٹوں روتہ رہی پھر بیٹا نا اٹھا کیونکہ محمد علی تو اپنی جان اس وطن کے لیے قربان کرکے شہید کا درجہ حاصل چکا تھا۔گل رعنا جس وقت اپنے بیٹے کے لیے تڑپ تڑپ کر رو رہی تو متعدد کیمروں نے اس کی اپنے شہید بیٹے کے ساتھ تصویر محفوظ کرلی،جس جس پاکستانی نے یہ تصویر دیکھی وہ تڑپ اٹھا گل رعنا کی تکلیف دیکھ کر جس بیٹے کو نو ماہ کوکھ میں رکھ کر پیدا کیا راتوں کو اٹھ اٹھ کر اس کی دیکھ بھال کی اتنی محنت کرکے پندرہ سال کا کیا آنے والے درندوں نے پندرہ منٹ بھی نا لگائے او گل رعنا کی امیدوں ارمانوں اور خوشیوں کا خون کرکے چلے گئے۔محمد علی کے جنازے میں پشاور اور مردان طورو میں بڑی تعداد میں لوگوں نے شرکت کی۔علاقے کا ہر شخص محمد علی کی تابع داری اور بڑوں کے ساتھ حسن سلوک کا چرچا کرتا رہا۔مردان میں طورو کے علاقے میں ننھے شہید محمد علی کو سپرد خاک کردیاگیا۔
گل رعنا کے وجود کا حصہ اس کی پندرہ سال کی محنت اس کا پیار اس کی آنکھوں کی تارہ اب ایک سرد قبر کا مکین ہے وہ بچہ جسے کو ماں نے کبھی ایک پل آنکھ سے دور نا کیا تھا آج مردان میں ابدی نیند سو رہا ہے۔گل رعنا کے گھر پاک فوج کے افسران اور اے این پی کے لیڈران حاجی غلام احمد بلور،ہارون بشیر بلور،میاں افتخار حسین اور شگفتہ مالک آئے اور انہیں تسلی دی اور دہشت گردوں کو نیست و نابود کرنے کا عندیہ دیا۔لیکن گل رعنا انتظار کرتی رہی کہ کب وزیر اعظم پاکستان میاں محمد نواز شریف،وزیر اعلی خیبر پختون خواہ پرویز خٹک کب پی ٹی آئی کے چیئرمین عمران خان،مریم نواز شریف اورپی پی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری اس کے گھر آئیں گے اس کے سر پر شفقت بھرا ہاتھ رکھیں گے ،شہاب الدین کو تسلی دیں گے محمد علی کی تین کم سن بہنوں کے آنسو پونچھیں گے لیکن ایسا نا ہوا کوئی بھی نا آیا۔ جب ووٹ لینے کے لیے لیڈران ہمارے علاقوں اور گھروں میں آسکتے ہیں تو ہمارے غم میں شرکت کرنے کیوں نہیں آسکتے جب گل رعنا کو یہ پتہ چلا کہ عمران خان آرمی پبلک سکول آرہے ہیں تو گل رعنا سوگ کی کیفیت میں اسکول چلی گئی اور عمران خان سے سوال کیا کہ یہ ہے وہ تبدیلی جس کا خواب آپ سب کو دیکھا رہے ہیں ؟ ہمارے بچے چلے گئے اور ہمیں پرسہ دینے بھی کوئی نہیں آیا۔آپ کب طالبان کے خلاف ایکشن لیں گے ؟ ہمارے بچوں کو انصاف کون دےگا؟ لیکن تحریک انصاف کے چیئرمین کے پاس کوئی جواب نا تھا۔
گل رعنا کہتی ہیں کہ میرا بیٹا محمد علی تو اس ملک پر اپنی جان نچھاور کرگیا لیکن میں نہیں چاہتی کہ اس قربانی رائیگاں جائے۔میں چاہتی ہوں میرے بیٹے کے لہو کی قربانی سے ملک میں امن آجائے اور کوئی ماں ایسا غم پھر نا دیکھے جو میں نے اور دیگر ایک سو چونتیس بچوں کی مائوں نے دیکھا ہے۔گل رعنا نے کہا کہ وہ چاہتی ہیں کہ انکے بیٹے باقی شہید ہونے والے بچوں کوسرکاری طور پر شہید کا درجہ دیا جائے اور آرمی پبلک کے شہدا کی یاد میں ایک یادگار تعمیر کی جائے۔انہوں نے آرمی اور حکومت پاکستان سے اپیل کی کہ ایک ایک دہشت گرد کو اسکو انجام تک پہنچایا جائے تاکہ پھر کسی ماں کی گود نا اجڑے۔
Javeria Siddique writes for Daily Jang

Contact at :Twitter @javerias
– See more at: http://blog.jang.com.pk/blog_details.asp?id=10477#sthash.1OdFvxwO.dpuf

Posted in ArmyPublicSchool, Pakistan

باقر کی آنکھیں سوال کرتی ہیں

باقر کی آنکھیں سوال کرتی ہیں

  Posted On Friday, January 16, 2015   ……جویریہ صدیق……
بچہ دنیا میں آکر جو پہلا پیار کا لمس محسوس کرتا ہے وہ ماں کا ہے۔ بچہ روتا ہے چیختا ہے ضد کرتا ہے لیکن ماں کی گود میں آکر بالکل چپ ہوجاتا ہے۔ ماں کی گرم آغوش بچے کو تسکین فراہم کرتی ہے۔ باقر نے جب 15سال پہلے آنکھ کھولی تو پہلا لمس محسوس کیا وہ سیدہ فرحت کا تھا۔ اس کی ماں سیدہ فرحت کوئی عام خاتون نہیں تھی۔ حافظ قرآن، ایم اے اسلامیات، ایم اےعربی اور بی ایڈ فرحت درس و تدریس کے شعبے سے منسلک تھی۔ 1996ء میں پشاور سے تعلق رکھنےوالے سید عابد علی شاہ کے ساتھ رشتہ ازدواج میں منسلک ہوئیں۔ پہلے سید سطوت کی پیدائش ہو ئی پھر سید باقر نے ان کی زندگی مکمل کردی۔ سید باقر نے ہوش سنبھالا تو اپنے ارداگرد تعلیمی ماحول پایا۔ والدہ سیدہ فرحت صبح جب اسے اور سطوت کو اٹھاتیں تو پورا گھر صاف، ان کے یونیفارم تیار اور ساتھ میں گرما گرم ناشتہ تیار ہوتا۔ ایک ساتھ ناشتے کرکے یہ روز ایک ہی ساتھ آرمی پبلک اسکول ورسک روڈ کے لیے روانہ ہوتے۔ سطوت فرسٹ ائیر میں اور باقر نویں جماعت میں اور ان کی والدہ سیدہ فرحت فرسٹ ائیر کی استاد ۔ سیدہ فرحت اپنے سکول آرمی پبلک کی مقبول ترین اساتذہ میں سے ایک تھیں۔ صوم وصلاۃ کی پابند اور قاریہ بھی تھیں۔ خوش اخلاق اور ملنسار سیدہ فرحت طالب علموں کے ساتھ دوستانہ رویہ رکھتی اور ان کی اخلاقی تربیت میں پیش پیش رہتیں۔
باقر کو تو یہ بہت ہی اچھا لگتا تھا کہ جہاں وہ پڑھتا ہے مما بھی وہاں ہی پڑھاتی ہیں لیکن باقر کی مما اس کو کہتیں بیٹا میں گھر میں آپ کی مما ہوں لیکن اسکول میں آپ کی استاد اس لیے کوئی مارجن نہیں ملے گا۔ کتنی بار ایسا ہوتا کہ باقر اپنی مما کی کلاس کے پاس سے گزرتا، ان کی ایک جھلک دیکھ کر پھر اپنی کلاس میں جاتا، کتنا اچھا لگتا ہے ناں ماں اسکول میں بھی بچے کے ساتھ ہو اور گھر میں بھی۔ باقر اسکول بریک میں مما کے ہاتھ کا بنا مزے مزے کا لنچ کرتا۔ کتنی بار ہوتا کہ پیار بھری ضد سے وہ اپنی مما سے پیسے بھی لیے لیتا اور کینٹین سے بھی چیزیں خریدتا۔ گھر واپسی ہوتی تو باقر اور سطوت مزے سے سو جاتے۔ فرحت گھر کے کام کاج میں لگ جاتیں شام کو بچوں کو چائے اور مزے مزے کے اسنیکس کے ساتھ اٹھاتیں، کبھی شامی کباب، کبھی چکن بوٹیاں تو کبھی نوڈلز۔ اس کے بعد وہ خود بچوں کو پڑھاتیں، ساتھ میں اسکول کا کام بھی کرتی رہتیں، بچوں کی کاپیاں، کبھی پیپرز تو کبھی نوٹس۔ رات گئے جب سید عابد گھر واپس آتے سب مل کر ٹی وی دیکھتے، کبھی تو باقر اور سطوت کا ٹی وی ریموٹ پر ہی جھگڑا ہو جاتا تو فرحت بہت پیار سے دونوں کی صلح کروادیتیں۔ رات کا کھانا سب مل کر ساتھ کھاتے۔ زندگی کتنی خوش گوار تھی۔
16دسمبر کو بھی معمول کے مطابق دن کا آغاز ہوا، سیدہ فرحت اٹھیں، فجر کی نماز پڑھی، گھر کی صفائی کیلئے کچن میں گئیں، اپنے شوہر اور بچوں کے لیے ناشتہ بنایا لیکن کسی کو بھی معلوم نہیں تھا کہ فرحت کا بنایا ہوا یہ ناشتہ ان کا آخری ناشتہ ہوگا، اس کے بعد سطوت اور باقر کبھی بھی ان کے ہاتھ کا ذائقہ دوبارہ محسوس نہیں کرپائیں گے۔ اپنے ہاتھوں سے اپنےبچوں کے کپڑے استری کیے، ان کے جوتے پالش کیے۔ باقر اور سطوت دونوں ہی کہتے تھے کہ مما اب ہم بڑے ہوگئے ہیں، کر لیں گے کام، لیکن ماں کے لیے تو بچے ہمیشہ بچے ہی رہتے ہیں۔ بچے تیار ہوگئے، پھر اپنے شوہر کو ناشتہ کروایا، ان کو تیار ہونے میں مدد کی۔ سیدہ فرحت راستے میں سورۂ یٰسین پڑھتی رہیں جوکہ ان کا روز کا معمول تھا، وہ سفر میں کم بات کرتی تھیں، قرآنی آیات کا ورد کرنا ان کا معمول تھا۔ فرسٹ ائیر کا پرچہ تھا۔ سید سطوت اور سیدہ فرحت اوپر کی منزل کی طرف چلے گئے اورسید باقر نیچے ہال میں۔
فرسٹ ائیر، سکینڈ ائیر جس کا پرچہ تھا، سیدہ فرحت بھی وہاں موجو د تھیں، ان کی ڈیوٹی کمرۂ امتحان میں تھی اور باقر کی کلاس اور نویں جماعت کے سارے سیکشنز نے ہال میں ابتدائی طبی امداد کی تربیت لینی تھی۔ اچانک دہشت گردوں نے اسکول پر حملہ کردیا اور ہال میں آکر فائرنگ شروع کردی۔ اساتذہ کو جلایا گیا اور بچوں پر گولیاں برسائیں۔ سیدہ فرحت نے جب فائرنگ سنی تو وہ اوپر کی منزل سے نیچے کی طرف بھاگیں جہاں سے فائرنگ کی آواز آرہی تھی، انہوں نے بچوں کو بچانے کی کوشش کی، باقر بھی ان ہی بچوں میں کہیں تھا، ہر طرف شور اور آہ و پکار تھی۔ دہشت گردوں نے اپنی گولیوں کا رخ فرحت کی طرف کردیا اور یوں اپنے شاگردوں کے ساتھ سیدہ فرحت بھی شہادت کے درجے پر فائز ہوگئیں۔ باقر بھی وہاں ہی تھا، ایک گولی چھوتی ہوئی اس کے سر کے پاس سے نکل گئی، خوش قسمتی سے اس کی جان تو بچ گئی لیکن اس کی ماں سیدہ فرحت اس کے سامنے جام شہادت نوش کرگئیں۔
ہنستا کھیلتا باقر اب بالکل چپ ہوکررہ گیا ہے، وہ سب کام تو کررہا ہے لیکن کسی روبوٹ کی طرح، وہ سب سے خفا ہے لیکن اپنی خفگی ظاہر نہیں کررہا۔ سید عابد کہتے ہیں کہ فرحت کو دفناتے وقت انہوں نے خود کو بہت تنہا محسوس کیا، سیاسی قیادت میں سے کوئی بھی ان ساتھ کھڑا نہ ہوا۔ وہ منتظر رہے کہ تحریک انصاف، جماعت اسلامی، مسلم لیگ ن یا پیپلز پارٹی کا کوئی نمائندہ تو آئے گا لیکن کوئی نہ آیا۔ باقر زخمی تھا لیکن سید عابد اس گھر لے آئے کیونکہ اس کی والدہ کا جنازہ تھا، باقر کی دلجوئی کے لیے بھی کوئی نہ آیا۔ کہتے ہیں بچے تو سب کے ایک جیسے ہوتے ہیں لیکن شاید سیاستدانوں کے نزدیک ایسا نہیں ہے۔ سید عابد کے مطابق ہماری داد رسی کے لیے صرف پشاور کے کور کمانڈر آئے اور بعد میں آرمی چیف جنرل راحیل شریف نے ہمیں بلایا اور ہمارے غم کو بانٹا۔
سید عابد علی شاہ کہتے ہیں کہ میری اہلیہ سیدہ فرحت تو شہادت کا رتبہ پا کر اعلیٰ مرتبے پر فائز ہوگئیں تاہم میرے کندھوں پر بھاری ذمہ داری عائد کرگئی۔ اب میں خود صبح اٹھتا ہوں، سطوت اور باقر کے لیے ناشتہ بناتا ہوں، ان کے لیے آفس سے واپس آکر کھانا بناتا ہوں۔ مگر مجھے یہ معلوم ہے ان کی زندگی میں ماں کی کمی کا خلا اب کوئی بھی پورا نہیں کرسکتا۔ میرے بچےبہت بہادری سے اسکول دوبارہ جانا شروع ہوگئے ہیں تاہم میں یہ جانتا ہوں کہ ان کے دل پر کیا بیت رہی ہے۔
سطوت اور باقر نے 12جنوری سے دوبارہ اسکول جانا تو شروع کردیا ہے لیکن اب سب چیزیں بدل گئی ہیں، اب ان کو ماں کے ہاتھ کا کھانا میسر نہیں، ماں کی آغوش میسر نہیں، ماں کا ساتھ میسر نہیں۔ باقر اور سطوت کے اسکول میں اب ان کی ماں استاد سیدہ فرحت موجود نہیں۔ اب سکول میں کبھی بھی وہ اس ماں کو نہیں دیکھ سکیں گے جن کے ساتھ وہ لنچ کرتے تھے اور پیسے لے کر کینٹین بھی جاتے تھے۔ اس سانحے کے بعد بھی باقر اس کلاس کے آگے سے گزرا ہوگا جہاں فرحت پڑھاتی تھیں۔اس کرب کو بیان کرنے کے لیے باقر کی نیم سرخ اور سوجی ہوئی آنکھیں ہی کافی ہیں۔ باقر کی کلاس 9بی کے 8بچے شہید ہوگئے، کلاس میں ان کی خالی کرسیاں باقی ہم جماعتوں کے لیے بہت تکلیف دہ ہیں۔
اب ذمہ داری حکمرانوں پر ہے جن ظالم دہشت گردوں کی وجہ سے باقر نے اپنی کل کائنات کو کھو دیا، ان سے حساب کب لیں گے۔ باقر کے لب خاموش ہیں لیکن آنکھوں میں بہت سے سوال ہیں، اس کو اپنی ماں کی اور ساتھیوں کی شہادت پر فخر ہے لیکن وہ خفا بھی ہےکیونکہ جن کے ساتھ زندگی کی شروعات کی وہ تمام ساتھی ابدی نیند سو گئے۔ مرکزی حکومت اور صوبائی حکومت جن کو سیاست سے ہی فرصت ہی نہیں اور اب انہوں نے شہدائے پشاور پر بھی الزامات کی سیاست شروع کردی ہے، اس طرح سے سانحہ پشاور کے دکھوں کا مداوا نہیں ہوسکتا۔ 16جنوری کو سانحہ پشاور کو ایک ماہ مکمل ہوگیا، اس وقت ہمیں ضرورت ہے کہ باقر جیسے بچوں کو آگے بڑھ کر گلے لگائیں ان کو کھل کر رونے کا موقع دیں، ان کے آنسو صاف کریں، ان کے گلے شکوے سنیں، ان کو یہ احساس دلائیں کہ وہ مشکل کی گھڑی میں اکیلے نہیں پورا پاکستان ان کے ساتھ ہے۔ اگر اب بھی سیاستدان اپنے مفادات کی سیاست کرتے رہے، یہی ہوتا رہا اور کچھ جماعتوں کی مجرمانہ خاموشی اس ہی طرح جاری رہی تو قوم کے نونہال انہیں کبھی معاف نہیں کریں گے۔ خیبر پختون خوا حکومت کو اب دوسرے صوبوں کے بجائے اپنے گریبان میں جھانکنا ہوگا کہ دو سا ل ہونے کو ہیں، انہوں نے تبدیلی کے کھوکھلے نعروں کے علاوہ کچھ صوبے کو دیا بھی ہے یا نہیں اور وفاق میں مسلم لیگ کو بھی اپنی مجرمانہ غفلت ختم کرکے صوبائی حکومت کے ساتھ مل کر دہشت گردی کا خاتمہ کرے۔ عوام ان کی ذاتی چپقلش اور عناد کا کافی تماشہ دیکھ چکے ہیں، اب بہتری اسی میں ہے کہ دہشت گردی کا خاتمہ کرنے کے لیے کام کیا جائے تاکہ باقر اور اس کے دوستوں کو انصاف مل سکے۔
Javeria Siddique writes for Daily Jang
Contact at https://twitter.com/#!/javerias
– See more at: http://blog.jang.com.pk/blog_details.asp?id=10585#sthash.898ki5Xp.dpuf

Posted in ArmyPublicSchool, Pakistan

پشاور میں قیامت صغریٰ

  Posted On Tuesday, December 16, 2014   ………جویریہ صدیق………
پشاور میں 16دسمبر کی صبح کتنی ہی ماؤں نے اپنے جگر گوشوں کو اٹھایا ہوگا کہ بیٹا اٹھ جاؤ ہاتھ منہ دھو لو، میں ناشتہ بنا رہی ہوں اور کتنے ہی بچوں نے نرم گرم بستر کو چھوڑنے سے انکار کیا ہوگا۔ سردیوں کی صبح اٹھنا کتنا مشکل ہوتا ہے نا؟؟ بہت سے ماؤں نے پیار سے ناشتہ بستر میں ہی اپنے بچوں کو کروا دیا ہوگا۔ اپنے ہاتھ سے نوالے کھلائے ہوں گے۔ کتنے ہی بچوں نے ناشتہ نہ کرنے کی ضد کی ہوگی لیکن مامتا کے آگے کون جیت سکتا ہے؟ کسی ماں نے اپنے لال کو پراٹھا انڈا کھلایا ہوگا کسی ماں نے جیم بریڈ اور چائے کسی بچے نے صبح توس کھانے کی فرمائش کی ہوگی، کسی نے کہا ہوگا امی مجھے صرف دودھ چاہیے اور کچھ نہیں۔ یوں ضد لاڈ میں بچے تیار ہوئے ہوں گے۔ماؤں نے اجلے یونیفارم خود پہنائے ہوں گے، موزے جوتے بھی۔ کچھ بچوں نے کہا ہوگا کہ امی میں اب بڑا ہوگیا ہوں میں خود پہن سکتا ہوں، آپ کیوں میرے کام کرتی ہیں۔ لیکن ماؤں نے پھر بھی مامتا سے مجبور سارے کام خود کیے ہوں گے۔ کچھ بچےجنہوں نے ابھی نوجوانی کی دہلیز پر قدم رکھا ہوگا امی سے چھپ کر جیل کر لگا کر ہیر اسٹائل بھی بنا یا ہوگا لیکن امی نے تو آکر اس ہیئر اسٹائل پر اونی ٹوپی رکھ دی ہوگی کہ بیٹا باہر بہت ٹھنڈ ہے، بنا ٹوپی کے باہر مت جانا۔ بچوں کی تیاری کے دوران ماؤں نے بہت سارے ٹفن لنچ بکس بھی تیار کیے ہوں گے، گرما گرم پراٹھے، کباب، بریڈ، آملیٹ اور کیا نعمت نہیں، اس چھوٹے سے ڈبے میں چپس، کیچپ، سوسج، مفن کیا نہیں۔کتنے ہی بچوں نے اپنے والد سےبھی پیسے نکلوائے ہوں گے کہ کینٹین سے بھی چیزیں کھائیں گے اور دوستوں بھی کھلائیں گے۔
کوئی بچہ اسکول وین میں گیا ہوگا تو کوئی اسکول بس میں، کوئی ڈرائیور کے ساتھ تو کسی نے ماں باپ کے ساتھ درس گاہ کا رخ کیا ہوگا۔ ماؤں نے کتنی دیر ہاتھ ہلا ہلا کر اپنے بچوں کو خداحافظ کہا ہوگا، جب تک وہ اوجھل نہیں ہوا ہوگا، ماں کا ہاتھ رکا نہیں ہوگا۔ کتنی دعائیں کرکے اسکول بھیجا ہوگا کیونکہ آج تو اسکول میں پیپر تھا۔ کتنے ہی باپ بھی اپنے بچوں کی کامیابی کے لیے دعاگو رہے ہوں گے کہ اللہ تعالیٰ میرے بچے کو امتحان میں سرخرو کرنا۔ زندگی معمول کے مطابق تھی، بچے مسکول میں، مائیں اپنے گھروں میں اور والد اپنے اپنے دفاتر میں۔ مائیں تو بچوں کے لیے دوپہر کا کھانا بنانے میں مصروف اور سوچتی ہوں گی جب میرا بیٹا میرالال واپس آئے گا تو اس کا من پسند کھانا کھلاؤں گی،لیکن یہ دن تو شروع ہی ہوا تھا قیامت صغریٰ میں تبدیل ہونے کے لیے۔ بچے اپنی اپنی کلاسوں میں امتحان دینے میں مشغول تھے کہ اچانک دہشت گردوں نے اسکول پر حملہ کردیا، ڈیڑھ ہزار نہتے طالب علم اوران کے نہتے110اساتذہ اس صورتحال کے لیے تیا ر نہیں تھے،لیکن پھر بھی اساتذہ نے ہر ممکن کوشش کی کہ بچوں کو بچایا جائے۔والدین کے بعد دنیا کا سب سے مقدس رشتہ اساتذہ کا ہے، کتنے ہی اساتذہ نے دہشت گردوں سے کہا ہوگا کہ ان کے شاگردوں کو کچھ مت کہا جائے لیکن دہشت گرد کہاں انسانیت کی زبان جانتے ہیں۔ انہوں نے اندھا دھند بچوں اور اساتذہ پر فائر کھول دیا۔
جس وقت گھروں میں مائیں اپنے بچوں کے لیے انواع واقسام کے کھانے بنا رہی تھیں اس وقت دہشت گرد چن چن کر ان کے بچوں کو گولیوں سے چھلنی کررہے تھے۔ بچوں کے اجلے یونیفارم خون کے لال رنگ سے رنگے گئے، ان کی کتابیں بستے سب دہشت گرد اپنے پاؤں تلے روندتے گئے اور مزید لوگوں کو نشانہ بنانے نکل گئے۔ جب یہ خبر جنگل میں آگ کی طرح پھیلی تو مائیں گھروں سے نکلیں۔شفقت سے بھرپور باپ دفاتر کاروباری مراکز سے بھاگے کہ اپنے جگر گوشوں کو بچائیں لیکن ان کے بچے تو دہشت گردوں نے یرغمال بنا لیے تھے۔ پاک آرمی نے آپریشن کا آغاز کیا، بچوں اور اساتذہ کو دہشت گردوں کے چنگل سے چھڑوانے کا آغاز کیا۔ اب تک بیشتر بچوں اور اساتذہ کو بحفاظت نکال لیا گیالیکن بہت سے ذی روح جان کی بازی ہار گئے۔ مائیں بلکتی رہیں اور اسکول سے لاشیں نکلتی رہیں،وہ جو خواب ان بچوں نے دیکھے تھے وہ سب چکنا چور ہوگئے، جو امیدیں والدین کی تھیں وہ بھی ایک گولی کی وجہ سے ختم ہوگئیں۔
پورا پشاور خون میں نہا گیا، وہ بھی ننھے منے پھولوں کےخون سے۔وہ پھول جو بنا کھلے مرجھا گئے۔وہ پھول جنہوں نے ابھی پائلٹ، ڈاکٹر، صحافی، سیاستدان، انجینئر، فوجی، بینکار بن کر اس ملک کی باگ ڈور کو سنبھالنا تھا۔ وہ بچے جن کی ماؤں نے ان کے سہرے کے پھول دیکھنے تھے سب منوں مٹی تلے جا سوئے۔ جس ماں نے نو مہینے اپنی کھوکھ میں رکھ کر پیدا کیا راتوں کو جاگ جاگ کر اپنے بچوں کو بڑا کیا، آج وہ یہ رات ان کے بنا کیسے گزاریں گے، اس کا جواب کون دے گا؟والدین اسپتالوں میں اپنے بچوں کو دیوانہ وار ڈھونڈتے رہے اور اس وقت بچوں کی کراہنے کی آوازیں اور لواحقین کی آہ و زاری کی وجہ سے قیامت کا سماں ہےلیکن اب بھی قوم کے حوصلے بلند ہیں۔ بچوں کی لاشیں وصول کرتے وقت بھی والدین کہتے رہے ہمیں اپنے بچوں کی شہادت پر فخر ہے اور حکومت اور پاک فوج چن چن کر ان دہشت گردوں کا خاتمہ کرے۔
سوشل میڈیا پر بھی عوام غم و حسرت کی تصویر نظر آئے اور پل پل اس واقعے کی مذمت کرتے رہے اور آنسو بہاتے رہے۔ آج ساری قوم متحد نظر آرہی ہے، اسی جذبے کے ساتھ ہم دہشت گردی کو شکست دے سکتے ہیں۔ جن ماؤں کے جگر گوشے چلے گئے وہ کبھی واپس نہیں آسکتے اور کوئی ان کے غم کا مداوا نہیں کرسکتا لیکن حکومت اور فوج مل کر بیٹھے اورحکمت عملی تیار کرے کہ آئندہ اس طرح کے واقعات کا سدباب کیسے کرنا ہے تاکہ کسی اور ماں کی گو د نہ اجڑے اور کوئی بھی بچہ اس صورتحال کا سامنا نہ کرے جس دہشت بربریت اور ظلم کے نشانہ بچے آج بنے۔
ظلم کی وہ داستاں کہ کانپے قلم جو ہو رقم
روحوں کے وہ زخم جو لفظوں سے بھر نہ پائیں گے
جو نگاہیں خامشی سے راہ ہماری دیکھتی ہیں
جان لو پتھر اگیں گر وہ ہماری آس ہیں
خون سے رنگے ہوئے ان منظروں کو دیکھتے
تو کیا ہمارا روپ ہوگا مختلف قاتل سے پھر
آنے والی نسل جب تاریخ کے اوراق پر
کاغذ کے منہ پہ خود پڑھے گی سب لکھا اس طور سے
تو کیا گوارہ وہ کرے گی شکل ہماری دیکھنا

Javeria Siddique writes for Daily Jang

Contact at https://twitter.com/#!/javerias
– See more at: http://blog.jang.com.pk/blog_details.asp?id=10446#sthash.1cGsGD6V.dpuf